ہوم   > بین الاقوامی

جنوبی کوریا: 47000 خنزیرذبح،دریاکاپانی ہی سرخ ہوگیا

3 weeks ago

جنوبی کوریا میں سوائن فلو کی وبا کے پیش نظر مزید 47000 خنزیروں کو ذبح کردیا گیا ہے۔

غیر ملکی خبر رساں ایجنسی کی جانب سے جاری رپورٹس کے مطابق کوریا کی سرحد پر بہنے والا دریا کا پانی اس وقت سرخ ہوگیا، جب دارالحکومت سیئول میں افریقی سوائن بخار کی وبا کو روکنے کیلئے 380،000 خنزیروں میں سے 47000 کو ذبح کرکے دریا کنارے پھینک دیا گیا۔

ماہرین کا کہنا ہے کہ پہلا کیس سامنے آنے کے بعد ہی حکومتی سطح پر اس کی روک تھام کیلئے اقدامات شروع کردیئے گئے تھے، تاہم اس سے انسانوں کو کوئی خطرہ لاحق نہیں۔

مقامی این جی او کے مطابق گزشتہ ہفتے ہونے والی موسلا دھار بارش کے باعث ذبح خانے سے بڑی تعداد میں خون اور گوشت کے لوتھڑے دریا میں بہہ گئے، جس سے دریا کا پانی سرخ ہوکر خونی دریا کا نقشہ پیش کرنے لگا۔

 

این جی او کے مطابق موجودہ حالات کئی لوگوں کیلئے ذہنی پریشانی اور صحت و صفائی کا مسئلہ بنا ہوا ہے۔ بڑی تعداد میں خون اور گوشت کے ٹکٹرے دریا کے پانی میں بہنے سے آس پاس کے علاقوں میں تعفن بھی پیدا ہو رہا ہے۔

 

پاس موجود کھیتوں میں کام کرنے والے کاشت کاروں کا کہنا ہے کہ یہ بدبو اتنی شدید ہے کہ ہم کھیتوں میں کام کیلئے بھی نہیں جاسکتے ہیں۔

شکایات منظر عام پر آنے کے بعد حکومت نے دریا کی صفائی اور آس پاس کے علاقوں کو بدبو سے پاک کرنے کیلئے اقدامات کا اعلان کردیا۔ دریا کے پانی کو مزید آلودگی اور آگے بڑھنے سے بچانے کیلئے متاثرہ حصوں پر بند باندھ دیئے گئے ہیں۔

 

آپ کے تبصرے

Your email address will not be published.

 
متعلقہ خبریں