ہوم   > بین الاقوامی

انڈونیشیا، سرکای دفاتر میں نقاب پر پابندی کی تجویز

1 month ago

فائل فوٹو: اے ایف پی

انڈونیشیا کی حکومت نے سرکاری دفاتر میں نقاب پر پابندی کی تجویز پیش کی ہے جس نے ملک میں نئی بحث چھیڑ دی۔

انڈونیشین اخبار جکارتہ پوسٹ کی رپورٹ کے مطابق ایک محدود طبقے نے اس مجوزہ پابندی کی حمایت کی ہے جبکہ دوسرے طبقے نے اس کی شدید مخالفت کرتے ہوئے حکومت کو خبردار کیا ہے کہ خواتین کے لباس میں مداخلت نہ کی جائے۔

سرکاری دفاتر میں نقاب پر پابندی کی تجویز انڈونیشیا کے وزیر مذہبی امور نے پیش کی ہے۔ بدھ کو میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ وزارت مذہبی امور اس معاملے پر غور کر رہی ہے اور ممکن ہے کہ نقاب پر پابندی سے متعلق قواعد و ضوابط تشکیل دی جائیں گی۔ مگر بعد ازاں وہ اپنے بیان سے پیچھے ہٹ گئے۔

وزیر مذہبی امور نے مزید کہا کہ نقاب پر مکمل پابندی کا کوئی ارادہ نہیں بلکہ صرف سرکاری دفاتر کے اندر سیکیورٹی اقدامات کے تحت نقاب پر پابندی زیر غور ہے تاکہ ورناتو کے ساتھ پیش آئے جیسے واقعات کی روک تھام ہوسکے۔

ورناتو انڈونیشیا کے لیگل اینڈ سیکیورٹی امور کے وزیر ہیں اور گزشتے ہفتے ان کے دفتر میں کچھ لوگوں نے ان کے ساتھ ہاتھا پائی کی تھی۔

دوسری جانب انڈونیشیا کے حکومتی ارکان سمیت عوام کی بڑی تعداد نے پابندی کی تجویز کو مسترد کردیا ہے۔

 

آپ کے تبصرے

Your email address will not be published.

 
متعلقہ خبریں