ہوم   > Latest

امریکا کا مشرق وسطیٰ میں مزید 1500 فوجی بھیجنے کا فیصلہ

4 months ago

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے ایران کے ساتھ تناؤ کے باعث مشرق وسطیٰ میں مزید 1500 فوجی بھیجنے کا اعلان کردیا۔

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے جاپان کے دورے سے قبل صحافیوں سے گفتگو میں کہا کہ ہم مشرق وسطیٰ میں امریکی مفادات کا تحفظ کرنا چاہتے ہیں، اس مقصد کیلئے ہم نسبتاً کم تعداد میں فوجی وہاں بھیجنے جارہے ہیں، حفاظتی دستے میں شامل فوجیوں کی تعداد تقریباً 1500 ہوگی۔

امریکی صدر کے مطابق مشرق وسطیٰ بھیجنے جانے والے دستے میں بحالی کا کام کرنے والے ایئرکرافٹ، جنگی طیارے، انجینئرز اور پیٹریاٹ میزائل ڈیفنس بٹالین کی توسیع شامل ہے، جس کے عملے کی موجودہ تعداد 600 ہے۔

قائم مقام وزیر دفاع پیٹرک شاناہن کا کہنا ہے کہ یہ ایران کی جانب سے ملنے والی دھمکیوں کا بھرپور جواب ہے۔

پینٹاگون حکام کہتے ہیں کہ 1500 مزید فوجیوں کو بھیجنے کا فیصلہ خطے میں پیش آنیوالے حالیہ واقعات کے رد عمل میں کیا گیا ہے، امریکی انٹیلی جنس کے مطابق ان تمام واقعات کا تعلق ایرانی قیادت سے ہے۔

ان واقعات میں بغداد کے گرین زون پر راکٹ حملہ، فجیرہ میں دھماکہ خیز مواد سے 4 ٹینکرز کا متاثر ہونا اور حوثی باغیوں کی جانب سے سعودی آئل تنصیبات پر ڈرون حملہ شامل ہیں۔

ڈائریکٹر پینٹاگون جوائنٹ اسٹاف ریئر ایڈمرل مائیکل گلڈے کہتے ہیں کہ ہم اسے ایک مہم کے طور پر دیکھتے ہیں، انہوں نے خطے میں فوجیوں کی تعداد میں اضافہ اور ایئر کرافٹ کیریئر ٹاسک فورس، بی 52 بمبار طیاروں اور سرعت سے حملہ کرنے کی صلاحیت رکھنے والے جہاز کی رواں ماہ کے اوائل میں تعیناتی دفاعی اور ایران کی جانب سے دھمکیوں کا جواب دینے کیلئے ہیں۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ ہم سمجھتے ہیں کہ اتنے بڑے پیمانے پر جنگی جہازوں کی تعیناتی اور عوامی پیغامات کے باوجود ہم پھر کوشش کررہے ہیں کہ ایران کے ساتھ جنگ کے امکانات کو کم کیا جائے۔

 

آپ کے تبصرے

Your email address will not be published.

 
متعلقہ خبریں