مقبوضہ کشمیر، قابض فوج نے 8 بے گناہ کشمیریوں کو شہید کردیا

May 17, 2019

مقبوضہ کشمیر میں بھارتی فوج کی ریاستی دہشتگردی جاری ہے، جہاں قابج بھارتی فورسز نے فائرنگ کرکے مزید آٹھ بے گناہ کشمیریوں کو شہید کردیا۔

کشمیر میڈیا سروس کی جانب سے بیان کے مطابق بھارتی ریاستی دہشت گردی کے بعد پلواما، شوپیاں اور بارہ مولا میں کشیدگی برقرار ہے۔ بھارتی مظالم کیخلاف وادی میں آج مکمل ہڑتال ہے، جب کہ کٹھ پتلی انتظامیہ نے احتجاج کے خوف سے وادی میں انٹرنیٹ اور موبائل فون سروس معطل کردی ہے۔ مکمل ہڑتال کے باعث سڑکیں سنسان، کاروباری اور تعلیمی مراکز بند ہیں۔

وادی میں ہڑتال کی اپیل حریت قیادت سید علی گیلانی، میر واعظ عمر فاروق اور یاسین ملک کی جانب سے دی گئی ہے۔ مشترکا حریت قیادت نے اپنے جاری کیے گئے بیان میں کشمیری نوجوانوں سے پرامن احتجاج کرنے کی اپیل کی ہے، بھارتی ریاستی دہشت گردی کے خلاف احتجاج جمعے کی نماز کے بعد کیا جائے گا۔ حریت رہنماؤں نے اپنے بیان میں بھارتی حکوت پر مقبوضہ کشمیر کو جنگی میدان میں تبدیل کرنے کا الزام بھی لگایا ہے۔

کشمیر میڈیا سروس کے مطابق قابض بھارتی فوجیوں نے 3 کشمیری نوجوانوں نصیر پنڈت، عمر میر اور خالد احمد کو ضلع پلوامہ کے علاقے ڈالی پورہ میں محاصرے اور سرچ آپریشن کے دوران شہید کیا، جب کہ مکان کو بھی دھماکے سے تباہ کر دیا۔

ڈالی پورہ میں ہی پر امن مظاہرین پر قابض بھارتی فوجیوں کی فائرنگ سے رئیس احمد ڈار نامی ایک اور نوجوان شہید جبکہ اس کا بھائی یونس احمد ڈار زخمی ہوگیا، یہ دونوں فوجیوں کی طرف سے تباہ کیے گئے مکان کے مالک کے بیٹے بتائے جا رہے ہیں۔

 

ادھر شوپیاں کے علاقے ہاندیو میں بھی بھارتی فوج کی طرف سے محاصرے اور تلاشی کی کارروائی کے دوران 3مزید کشمیری نوجوان شہید ہوگئے۔