ہوم   > صحت

فائنڈ مائی ڈاکٹر: چیک اپ کیلئے ڈاکٹر کو گھر بلائیں

SAMAA | - Posted: Mar 25, 2020 | Last Updated: 2 weeks ago
SAMAA |
Posted: Mar 25, 2020 | Last Updated: 2 weeks ago

Photo/AFP

ایک طرف کرونا وائرس کے ٹیسٹ کٹ کی رسد کم اور طلب بہت زیادہ ہے۔ دوسری جانب جس کو بھی کھانسی یا بخار ہوتا ہے وہ سمجھتا ہے کہ کرونا وائرس کا شکار ہوگیا ہے۔ ماہرین صحت کا کہنا ہے کہ ہر بخار اور کھانسی کہ وجہ کرونا وائرس نہیں۔

فائنڈ مائی ڈاکٹر کے سی ای او سعد صدیقی کا کہنا ہے کہ ہر بندے کو اس وقت فوری طور پر اسپتال بھاگنے کے بجائے ڈاکٹر سے رابطہ کرنا چاہئے۔ اسی سوچ کے تحت فائنڈ مائی ڈاکٹر نے کرونا وائرس کی ہنگامی حالت میں ٹیسٹ کٹ کا ضیاع روکنے کیلئے نئی مہم کا آغاز کیا ہے۔

سعد صدیقی نے مشورہ دیا کہ اگر کسی کو شبہ ہے کہ وہ کرونا وائرس کا شکار ہے تو پہلے فائنڈ مائی ڈاکٹر کی ویب سائٹ یا ایپلی کیشن کے ذریعے ڈاکٹر سے چیک اپ کروانا چاہیے۔ ڈاکٹر آپ کے گھر آکر آپ کا معائنہ کرنے کے بعد آپ کو کرونا وائرس کا ٹیسٹ کرنے یا نہ کرنے کا مشورہ دے گا۔

انہوں نے کہا کہ پہلے ڈاکٹر چیک اپ کیلئے جاتے وقت کرونا وائرس کے ٹیسٹ کٹ بھی ساتھ لیکر جاتے تھے۔ ان ڈاکٹروں کو ٹریننگ اور حفاظتی کٹ بھی دی جاتی تھی۔ تقریبا 130 ٹیسٹ کیے گئے ہیں جن میں صرف صفر اعشاریہ 5 افراد کے نتائج مثبت آئے۔ مگر سندھ حکومت کی جانب سے لاک ڈاؤن کے بعد گھروں میں جاکر ٹیسٹ کرنا ناممکن ہوگیا۔

لاک ڈاؤن کے نتیجے میں فائنڈ مائی ڈاکٹر کمپنی کے بزنس میں اضافہ ہوگیا ہے۔ سعد صدیقی کے مطابق پہلے روزانہ 80 سے 100 کے درمیان آرڈرز آتے تھے، اب 200 آرڈرز روزانہ موصول ہوتے ہیں۔ مریضوں کی جانب سے کمپنی کو ٹیلی فون کالوں میں بھی اضافہ ہوگیا ہے جبکہ او پی ڈیز بند ہونے کے باعث ڈاکٹروں کی تعداد بھی بڑھ گئی ہے۔

فائنڈ مائی ڈاکٹرز کی جانب سے ایمرجنسی خدمات فراہم نہیں کی جاتی، اس لیے ڈاکٹروں کا وقت بھی مقرر ہے اور مریض بھی انہی اوقات میں ڈاکٹر بھیجنے کی درخواست کرسکتے ہیں۔ کمپنی کے پاس اس وقت 100 ڈاکٹرز ہیں جبکہ ٹیسٹ کیلئے بھی عملہ موجود ہے اور لیبارٹریز میں عیسی لیب، این آئی بی ڈی، چغتائی، حسینی اور ہاشمانی کے ساتھ معاہدے ہیں۔

سعد صدیقی کہتے ہیں فی الحال یہ سروس صرف کراچی تک محدود ہے مگر کرونا وائرس کا ہنگامہ ختم ہونے کے بعد اس کا دائرہ کار دوسرے شہروں تک بڑھانے کا ارادہ ہے۔

فائنڈ مائی ڈاکٹر پر ڈاکٹر کی فیس 800 روپے فکس ہے۔ اگر کوئی میڈیکل انشورنس کرواتا ہے تو وہ مفت فائدہ اٹھا سکتا ہے جس میں ہوم کیئر اور والدین کا علاج بھی شامل ہے۔ عنقریب نرسنگ کی خدمات بھی متعارف کروائی جائے گی۔

WhatsApp FaceBook

آپ کے تبصرے

Your email address will not be published.

متعلقہ خبریں
WhatsApp FaceBook
 
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube