ہوم   > صحت

پنجاب:مسیحاؤں کا او پی ڈیز کے بعدسڑکیں بند کرنےکابھی آغاز

1 month ago

ڈاکٹرز کے احتجاج کا 12 واں دن، شاہراہوں پر بھی دھرنے

پنجاب کے سرکاری اسپتالوں میں ایم ٹی آئی آرڈینس کے خلاف ڈاکٹرز کا احتجاج جاری ہے جب کہ مختلف شہروں کی بڑی شاہراہوں کو بلاک کر دیا گیا ہے۔

راولپنڈی، لاہور، ملتان اور فیصل آباد کے تمام سرکاری اسپتالوں میں آؤٹ ڈور سروسز 12 ویں روز بھی معطل ہے۔ ڈاکٹرز، نرسز اور پيراميڈيکل اسٹاف کے تمام بڑی شاہراہوں پر دھرنے جاری ہیں۔

لاہور میں کینال روڈ، فیروزپور روڈ، جیل روڈ اور کوئین روڈ ڈاکٹرز نے بلاک کر دی ہے جس سے ٹریفک کی روانی متاثر ہے۔

گرینڈ ہیلتھ الائنس کا پنجاب بھر میں احتجاج

مظاہرین کا کہنا ایم ٹی آئی ایکٹ کو کسی صورت نافذ نہیں ہونے دیں گے لہٰذا حکومت اپنا فیصلہ واپس لے۔

راولپنڈی میں ینگ ڈاکٹرز ایسوسی ایشن نے مطالبات تسلیم ہونے تک ہڑتال جاری رکھنے کا فیصلہ کیا ہے۔ او پی ڈی کی بندش کے باعث مریضوں کو سخت مشکلات کا سامنا ہے۔

پنڈی:اسپتالوں میں7 روزسےاوپی ڈیز بند،مریض پریشان

فیصل آباد میں ڈاکٹرز نے جیل روڈ، اسٹیشن چاوک اور مال روڈ پر دھرنا دے دیا جس کی وجہ سے سول اسپتال جانے والا راستہ بند ہوگیا اور ایمبولینسز پھنس گئیں۔

ملتان میں ایم ٹی آئی ایکٹ کے خلاف گرینڈ ہیلتھ الائنس کی جانب سے نشتر روڈ پر احتجاجی ریلی نکالی گئی۔ ڈاکٹرز کے دھرنے کے باعث روڈ پر ٹریفک کی روانی بھی متاثر ہوئی۔

ایم ٹی آئی ایکٹ

مذکورہ ایکٹ کے تحت ٹیچنگ اسپتالوں کے معاملات چلانے کےلیے پرائیویٹ لوگوں پر مشتمل بورڈ آف گورنرز کے نام پر انتظامی بورڈ تشکیل دیا جاتا ہے۔

ٹیچنگ اسپتالوں میں پرنسپل اور ایم ایس کے عہدے تحلیل کر دیے جاتے ہیں اور بورڈ آف گورنرز کی جانب سے ڈین، اسپتال ڈائریکٹرز، میڈیکل ڈائریکٹرز، نرسنگ ڈائریکٹرز منتخب کیے جاتے ہیں۔

ایم ٹی آئی آرڈیننس کے تحت بورڈ آف گورنرز میں بھی نجی شبعوں سے منسلک ماہرین ہوتے ہیں۔

 

آپ کے تبصرے

Your email address will not be published.

 
متعلقہ خبریں
 
 
 
 
 
 
 
 
Punjab hospital, MIT act, Lahore, Rawalpindi, Faisalabad, Multan, patients