دیسی چارہ کھانے والی بھینسوں کا دودھ زیادہ بہتر ہوتا ہے

Samaa Web Desk
May 15, 2018

برطانوی ماہرین صحت کا کہنا ہے کہ دیسی چارے پر پالی جانے والی بھینسیں یا بکریاں کا دودھ فارم میں پالی جانے والی بھینسوں اور بکریوں کے دودھ سے کئی گنا بہتر ہوتا ہے۔

لندن ۔ 3 مئی (اے پی پی) برطانوی ماہرین کے مطابق صحت مند زندگی گزارنے کے لئے دودھ بہترین غذا ہے اور اس کے لئے دیسی چارے پر پالی جانے والی بھینسیں یا بکریاں کا دودھ فارم میں پالی جانے والی بھینسوں اور بکریوں کے دودھ سے کئی گنا بہتر ہوتا ہے۔

نیوکاسل یونیورسٹی کے شعبہ صحٹ کے ماہرین کی جدید تحقیق سے معلوم ہوا ہے کہ ایسی بھینسیں یا بکریاں جنہیں دیسی چارے پر پالاجائے ان کے دودھ میں غذائیت کے ساتھ ساتھ توانائی بھی کئی گنا ہوتی ہے۔

دیسی چارے پر پلنے والی بھینس کے دودھ میں عام بھینس کی نسبت 50 فیصد زیادہ غذائیت ہوتی ہے، جب کہ ان میں وٹامنز کی مقدار اور دیگر خصوصیات بھی زیادہ ہوتی ہیں۔

 

محققین کا کہنا ہے کہ خالص دودھ استعمال کرنے والے لوگ زیادہ صحت مند اور تندرست زندگی گزارتے اور کئی بیماریوں سے بھی محفوظ رہتے ہیں۔ ماہرین کے مطابق دودھ میں کیلشیئم کی وافر مقدار پائی جاتی ہے جو دانتوں، مسوڑوں اور ہڈیوں کو مضبوط بنانے میں مددگار ثابت ہوتا ہے اس لئے صحتمند اور خصوصی طور پر بڑھتی عمر کے بچوں کے لئے اس کا باقائدہ استعمال نہایت مفید ہے۔