Saturday, September 25, 2021  | 17 Safar, 1443

مہوش حیات کانامناسب تبصرے کرنے والوں کو جواب

SAMAA | - Posted: Aug 2, 2021 | Last Updated: 2 months ago
Posted: Aug 2, 2021 | Last Updated: 2 months ago

تمغہ امتیاز حاصل کرنے والی اداکارہ مہوش حیات نے واضح کیا ہے کہ اپنے رائے بتانے پرنفرت انگیزی مجھے میرے جمہوی حق کے استعمال سے کبھی نہیں روک سکتی، ایسے الفاظ کا استعمال آپ کی شخصیت کی عکاسی کرتا ہے۔

سماجی رابطوں کی سائٹ ٹوئٹرپراداکارہ نے لکھا کہ ‘ اگرچہ میں نے حکومت کے خلاف کچھ نہیں کہا ، ہم ایک جمہوریت میں رہتے ہیں اور اقتدار میں رہنے والوں کو جوابدہ ٹھہرانا مجھ سمیت ہر شہری کا حق ہے’۔

اداکارہ اپنی سابقہ ٹویٹس کاحوالہ دے رہی تھیں جس میں انہوں نے ملک میں بڑھتے جنسی زیادتی کے افسوس ناک واقعات پر کہا تھا کہ ہیش ٹیگز اور نعروں کا وقت ختم ہوچکا ہے، حکومت بتائے ان واقعات کی روک تھام کے لیے کون سے اقدام کر رہی ہے۔

سوشل میڈیا صارفین کی بڑی تعداد نے اس بیان پر مہوش کا تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے نامناسب تبصرے کیے تھے۔

مہوش کے سیاست میں آنے سے متعلق بیان پربھی انہیں تنقید کا نشانہ بنایا گیا تھا جس میں ان کا کہنا تھا اگر کوئی کرکٹر کر سکتا ہے تو ایک اداکارہ بھی وزیر اعظم بن سکتی ہے۔ بیشترکا کہنا تھا کہ انہیں اپنا موازنہ عمران خان سے نہیں کرنا چاہیے تھا۔

یہ پہلا موقع نہیں ہے جب اداکارہ کو اس طرح کے سخت تبصروں کا سامنا کرنا پڑا۔ 2019 میں تغہ امتیازملنے پربھی سوشل میڈیا پر ان کی کردار کشی کی گئی تھی۔ مہوش نے جواب دیتے ہوئے کہا کہ بطور ایک سیلیبرٹی وہ ٹرولنگ اور تنقید کی عادی ہیں لیکن کردار پر سوال اٹھانا قابل قبول نہیں۔

کیا مہوش حیات وزیراعظم کی جگہ لیں گی؟

خیال رہے کہ 20 جولائی کو وفاقی دارالحکومت اسلام آباد میں ملزم ظاہر جعفر کی جانب سے قتل کی گئی سابق سفارت کار کی بیٹی 27 سالہ نور مقدم اور حیدرآباد میں شوہروں کی جانب سے قتل کی جانے والی قرۃ العین اور صائمہ کے قتل کے بعد شوبز شخصیات حکومت کی کارکردگی سے نالاں ہیں۔

WhatsApp FaceBook
تازہ ترین
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube