عدالت نے ميشا شفيع کی گواہ عفت عمر کو پھرطلب کرليا

SAMAA | - Posted: Jan 19, 2021 | Last Updated: 6 months ago
SAMAA |
Posted: Jan 19, 2021 | Last Updated: 6 months ago

پروگرام میں عمران خان پرسیاسی طنز کیا تھا،عفت عمر

گلوکار علی ظفر کی جانب سے گلوکارہ میشا شفیع کے خلاف دائر کیے گئے ہتک عزت کے کیس میں سیشن عدالت نے عفت عمر کو یکم فروری کو دوبارہ طلب کر لیا۔

ایڈیشنل سیشن جج کے روبرو میشا شفیع کی گواہ عفت عمر پیش ہوئیں، کیس کی سماعت ایڈیشنل سیشن جج امتیاز علی کی سربراہی میں ہوئی۔

جرح کے دوران علی ظفر کے وکلا نے عفت عمر سے پوچھا کہ وہ سنتھیا رچی اور رحمٰن ملک کے کیس سے متعلق کیا جانتی ہیں؟ جس پر اداکارہ نے جواب دیا کہ سنتھیا رچی نے سابق وزیر داخلہ پر جنسی ہراسانی کا الزام لگایا تھا۔

عفت عمر کے جواب کے بعد کمرہ عدالت میں ان کی مذکورہ کیس سے متعلق ایک ویڈیو کلپ چلائی گئی اور ساتھ ہی ان کی ویڈیو کو ریکارڈ کا حصہ بنا دیا گیا۔

ویڈیو نشر کرنے کے بعد عفت عمر نے کہا کہ انہوں نے پروگرام میں بیان دیا تھا کہ سنتھیا رچی نے پیپلز پارٹی کو بدنام کرنے کے لیے الزام لگایا۔

عفت عمر نے عدالت کے سامنے اعتراف کیا کہ انہوں نے سنتھیا رچی کے بیان کو سیاسی اسٹنٹ بھی قرار دیا تھا اور ساتھ ہی کہا تھا کہ امریکی خاتون نے سابق وزیر اعظم اور سابق وزیر داخلہ پر جھوٹا الزام لگایا۔

جرح کے دوران عفت عمر نے کہا کہ پروگرام میں عمران خان پر سیاسی طنز کیا تھا۔

عفت عمر سے جرح کی گئی مگر وہ مکمل نہ ہوسکی،میشا شفيع کے وکیل کی استدعا پر مزید سماعت یکم فروری کے لیے ملتوی کر دی گئی تاہم عدالت نے عفت عمر نے اگلی سماعت پر دوبارہ طلب کرلیا۔

عفت عمر سماعت کے بعد کمرہ عدالت سے نکلیں تو علی ظفر کے حامیوں نے نعرے بازی بھی کی۔

واضح رہے کہ اپریل 2018 میں میشا شفیع نے ٹوئٹر پرعلی ظفرکیخلاف الزام عائد کیا تھا کہ وہ انہیں ایک سے زیادہ مواقع پرجسمانی طورپرہراساں کرچکے ہیں، جواب میں علی ظفرنے میشا کے خلاف ہتک عزت کا مقدمہ دائرکیاتھا۔

علی ظفرنے موقف اختیارکیا کہ میشا شفیع نے 19 اپریل 2018 کو اپنا ٹوئٹراکاونٹ میرے خلاف تحقیرآمیزجملے اورجھوٹے الزامات پوسٹ کرنے کے لئے استعمال کیا۔ ملزمان کو دفاع کے کئی مواقع ديے گئے ليکن وہ تسلی بخش جواب نہيں دے سکے۔ میشا شفیع کی جانب سے جنسی ہراسانی کے الزام سے ہفتوں قبل کئی جعلی اکاؤنٹس کی جانب سے میرے خلاف مذموم مہم کا آغازکیا گیا۔

 

WhatsApp FaceBook

آپ کے تبصرے :

Your email address will not be published.

متعلقہ خبریں
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube