Sunday, September 19, 2021  | 11 Safar, 1443

ميشاشفيع نے جھوٹا الزام لگاکر بدنام کيا، علی ظفر

SAMAA | - Posted: Nov 23, 2020 | Last Updated: 10 months ago
SAMAA |
Posted: Nov 23, 2020 | Last Updated: 10 months ago

بدنام کرنے کا الزام گلوکار علی ظفر نے ميشا شفيع پر ايک ارب ہرجانے کا دعویٰ کرديا۔

علی ظفر کی درخواست پر لاہور کے سیشن عدالت میں کیس کی سماعت ہوئی، گلوکار علی ظفر نے مؤقف اختیار کیا کہ میشا شفیع نے ان پر ہراسمنٹ کا جھوٹا الزام لگایا اور سوشل میڈیا پر بدنام کیا عدالت ایک ارب روپے ہرجانہ کا حکم دے۔

سماعت کے موقع پر میشا شفیع کی والدہ پیش ہوئیں، انہوں نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ان کی بیٹی اپنا بيان ریکارڈ کرا چکی ہیں وہ عدالت سے پہلے بھاگی ہیں ، نہ اب فرار ہوں گی ۔

میشا شفیع کی والدہ صبا حمید کا کہنا تھا کہ جب ضرورت ہوگی وہ آ جائے گی باقی ميں اس کے کسی کمنٹ پر کمنٹ نہيں کرنا چاہتی

علی ظفر کی جانب سےدائر کیا گیا ہرجانے کا یہ دعوی گواہوں کے بیانات ریکارڈ کرنے کے مرحلے پر ہے تاہم مختصر کارروائی کے بعد عدالت نے سماعت تیس نومبر تک ملتوی کردی ۔

شوبز کے دونوں ستاروں کے درمیان قانونی جنگ کافی عرصے سے جاری ہے، میشا شفیع نے بھی ایک اور عدالت میں علی ظفر کے خلاف دو ارب روپے ہرجانے کا دعوی دائر کررکھا ہے۔

اپریل 2018 میں میشا شفیع نے ٹوئٹر پرعلی ظفرکیخلاف الزام عائد کیا تھا کہ وہ انہیں ایک سے زیادہ مواقع پرجسمانی طورپرہراساں کرچکے ہیں، جواب میں علی ظفرنے میشا کے خلاف ہتک عزت کا مقدمہ دائرکیاتھا۔

گلوکارنے الزامات کی تردید کرتے ہوئے کہا تھاکہ میری ساکھ کو پہنچنے والے نقصان اورجھوٹے الزامات عائد کرنے پرمیشا شفیع ہرجانہ ادا کریں۔

WhatsApp FaceBook
تازہ ترین
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube