Thursday, October 22, 2020  | 4 Rabiulawal, 1442
ہوم   > اینٹرٹینمنٹ

صحرا کی بلبل ریشماں کی چھٹی برسی

SAMAA | - Posted: Nov 3, 2019 | Last Updated: 12 months ago
SAMAA |
Posted: Nov 3, 2019 | Last Updated: 12 months ago

.

پکے سُر، دلوں کو چھوتے راگ اور اس پر خوبصورت آواز ۔۔ جی ہاں صحرا کی بلبل ریشماں کو جدا ہوئے 6 برس بیت گئے۔ لوک گلوکارہ کو 2008 میں ستارہ امتیاز سے نوازا گیا تھا۔

راک اور ہپ ہوپ کے دور ميں بھی لمبی جدائی کا سحر برقرار ہے۔ سال 1947میں پیدا ہونے والی ریشماں کا تعلق خانہ بدوشوں خاندان سے تھا۔ وہ تقسیم ہند کے بعد اہل خانہ کے ہمراہ پاکستان آئیں۔ ریشماں نے اپنے فنی کیرئیر کا آغاز محض 12برس کی عُمر میں ریڈیو پاکستان سے کیا۔

وہ کم سُنی میں ہی مختلف صوفیاء کے مزاروں پر گنگنایا کرتی تھیں۔

عظیم صوفی بزرگ لال شہباز قلندر کے مزا رپر ”ہو لعل میری“ گانے پر اُنہیں ریڈیو اور بعد ازاں ٹی وی پر بھی گانے کا موقع ملا ”سن چرخے دی مٹھی مٹھی کوک، ماہیا مینوں یاد آوندا“ جیسے گیتوں نے اُنہیں شہرت کی بلندیوں تک پہنچایا۔

 

بھارت کے سابق وزیراعظم اندرا گاندھی کی دعوت پر بھارت بھی گئیں۔ اُن کے متعدد گیت بھارتی فلموں میں بھی شامل کیے گئے۔

ریشمان کو سال 1980 میں گلے کے کینسر کے انکشاف کے بعد سابق صدر پرویز مشرف نے علاج معالجہ بھرپور امداد فراہم کی۔ حکومت پاکستان کی جانب سے انہیں ’ستارہ امتیاز‘ اور ’بلبل صحرا‘ کا خطاب عطاء کیا گیا، تاہم 3 نومبر سال 2013 کو وہ طویل علالت کے بعد انتقال کر گئیں۔

WhatsApp FaceBook

آپ کے تبصرے :

Your email address will not be published.

متعلقہ خبریں
WhatsApp FaceBook
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube