ہوم   > اینٹرٹینمنٹ

فلم’’ دُرج‘‘کی نمائش پرپابندی کیوں عائد کی گئی؟

2 weeks ago

معروف اداکاراورڈائریکٹرشمعون عباسی کی سوشل میڈیا پوسٹ سے ان کی نئی آنے والی فلم’’ دُرج‘‘ کی پاکستان میں نمائش پر پابندی سے متعلق خبروں کی تصدیق تو ہوگئی لیکن اس پابندی کی وجہ کیا ہے؟۔

سینٹرل بورڈ آف فلم سینسرز کی جانب سے فلم پر پابندی عائد کیے جانے سے متعلق سماء ڈیجیٹل نے ڈائریکٹرشمعون عباسی سے رابطہ کیا جنہوں نے اس صورتحال پرسخت مایوسی کا اظہارکیا۔

شمعون عباسی کا کہنا تھا کہ فلم کو پنجاب اورسندھ سینسر بورڈز سے کلیئرنس سرٹیفکیٹ مل چکا تھا جو ڈسٹری بیوشن کمپنی کے پاس ہیں۔ لیکن سینٹرل بورڈ نے بغیرکوئی ٹھوس وجہ بتائے فلم کی پاکستان میں نمائش پر فوری پابندی عائد کردی۔

اس حوالے سے شمعون عباسی نے سوشل میڈیا پر پوسٹ میں بھی کہا کہ بغیر کسی نوٹس کے جاری نہ ہونے تک فلم ’’ دُرج‘‘ پاکستان میں ریلیز نہیں کی جائے گی۔ تاہم شمعون پرامید ہیں کہ سینسر بورڈ اس معاملے میں ان کی مدد کرے گا۔

سماء ڈیجیٹل سے بات کرتے ہوئے شمعون عباسی کا مزید کہنا تھا کہ ٹریلرریلیز کے بعد سے اسے اب تک 2 ملین سے زائد لوگ دیکھ چکے ہیں۔ ہمیں دنیا بھر سے اس کا بہت اچھا رسپانس ملا ہے۔  انڈونیشیا، ناروے، خلیجی ممالک سمیت جہاں جہاں فلم ریلیز ہونی ہے، شائقین کو بےصبری سے اس فلم کاانتظار ہے۔

انہوں نے فلم کی پاکستان میں ریلیزپرپابندی عائد کیے جانے پرافسوس کااظہار کرتے ہوئے مزید کہا کہ یہ فلم ایک انتہائی اہم اور حساس موضوع پر بنائی گئی ہے۔ معاشرے کو اس حوالے سے زیادہ آگہی کی ضرورت ہے ، اس کے باوجود نمائش پرپابندی عائدکردینا سمجھ سے بالاتر ہے۔

شمعون عباسی نے کہا کہ ٹریلرریلیز کے بعد ملنے والے ردعمل سےاندازہ ہوا کہ ناچ گانے کے کلچرسے ہٹ کربھی شائقین ایسی فلمیں دیکھنا چاہتے ہیں اور پابندی کی خبر کے بعد سے پاکستانی شائقین مایوسی کا اظہارکررہے ہیں۔

اس حوالے سے سینسر بورڈ کا موقف ہے کہ فلم کا موضوع عام پبلک کے لئے موزوں نہیں ہے۔

سندھ فلم سنسر بورڈ کے ممبر عمر خطیب خان نے سماء ڈیجیٹل کو بتایا کہ’’ فلم کو ابتدا میں پنجاب اور سندھ دونوں میں سنسر بورڈز نے کلیئر کیا تھا ، لیکن فیڈرل سنسر بورڈ کی جانب سے فلم کی نمائش کیلئے اجازت نہ ملنے پر ہمیں بھی کلیئرنس واپس لیتے ہوئے فلم کو روکنا پڑا‘‘۔

فلم ’’ دُرج ‘‘ دراصل سچی کہانی پرمبنی ہے۔ اس میں بھکر کے رہائشی 2 آدم خور بھائیوں کی کہانی بیان کی گئی ہے جو قبریں کھود کر لاشیں نکالتے تھے۔

فلم کے مرکزی کرداروں میں شمعون عباسی اورفلم کی پروڈیوسرشیری شاہ کےعلاوہ مائرہ خان، نعمان جاوید اور حفیظ علی شامل ہیں۔ فلم 18 اکتوبرکو پاکستان بھر میں ریلیزکی جانی تھی۔

فلم10اکتوبر کو متحدہ عرب امارات، عمان، قطر اور کویت میں جبکہ 11اکتوبر کو امریکہ، برطانیہ، کینیڈا، ناروے اور ڈنمارک میں ریلیز کی جا رہی ہے۔

یاد رہے کہ شمعون عباسی اس فلم کے ساتھ 14 سے 25 مئی 2019 تک ہونے والے 72 ویں کانز فلم فیسٹیول میں بھی شرکت کرچکے ہیں جس سے قبل فلم جائزے کے لئے ’’دا سوسائٹی آف فلم ڈائریکٹرز‘‘ کے پاس بھیجی گئی جہاں سے اسے منظوری دی گئی تھی۔

 

آپ کے تبصرے

Your email address will not be published.

 
متعلقہ خبریں