پاکستان اور بھارت کے درمیان 65ء کی جنگ کے دو دوست

Shaheen Shahzadi
September 6, 2018

فیصل آباد کے دو فوجی جوان دوست انیس سو پینسٹھ کی جنگ میں بچھڑے مگر رہتی دنیا تک امر ہوگئے۔

لانس نائیک مختار احمد پہلوان نے دشمن کو چاروں شانے چت کیا اور خود وطن کی خاطر قربان ہوگئے۔

دوست کی شہادت کی داستان فیصل آباد کے 85 سالہ ریٹائرڈ فوجی غلام سرور کے ذہن میں آج بھی تازہ ہے، اپنے دوست کے بارے میں غلام سرور کا کہنا ہے وہ بہت بہادر تھا، وہ اپنے ساتھی زخمی کو بچانے کیلئے مرہم پٹی کر رہا تھا کہ دشمن کی گولی کا نشانہ بن گیا۔

انہوں نے کہا کہ وہ میرا بہت اچھا دوست تھا، جب بھی 1965ء کی جنگ (یوم دفاع) یاد آتا ہے تو اس کی بہت یاد آتی ہے۔

شہید مختار احمد پہلوان نے کُشتی میں بھی پاکستان کا نام پوری دنیا میں روشن کیا تھا۔

شہید کی جو موت ہے وہ قوم کی حیات ہے، یہ درس ہے ان شہداء کا جنہوں نے جانوں کے نذرانے پیش کئے مگر وطن پر آنچ نہ آنے دی۔