Friday, January 28, 2022  | 24 Jamadilakhir, 1443

گردشی قرضوں میں ماہانہ 34.75ارب روپے کا اضافہ

SAMAA | - Posted: Dec 3, 2021 | Last Updated: 2 months ago
SAMAA |
Posted: Dec 3, 2021 | Last Updated: 2 months ago
Pakistan Debt Isb PKG 24-08

فائل فوٹو

رواں مالی سال کے پہلے چار ماہ میں پاکستان کے گردشی قرضوں میں 139 ارب روپے کا اضافہ ہوا ہے۔

جمعرات کو وفاقی وزیر برائے منصوبہ  بندی اسد عمر کی زیر صدارت کابینہ کمیٹی برائے توانائی کے اجلاس میں یہ بات سامنے آئی کہ توانائی کے شعبے کا گردشی قرضہ 2 ہزار419 ارب روپے کی بلند ترین سطح پر پہنچ گیا ہے۔

 سرکاری دستاویز کے مطابق اکتوبر 2021 تک گردشی قرضے کا کل حجم 2419 ارب روپے ہوچکا ہے جو کہ رواں سال جون تک 2280 ارب روپے تھا۔ جولائی تا اکتوبر گردشی قرضے میں ماہانہ 34.75 ارب روپے کا اضافہ ریکارڈ کیا گیا۔

کابینہ کے اجلاس میں مالی سال 22-2021 کے اختتام تک گردشی قرضے میں 529 ارب کمی کا تخمینہ لگایا گیا ہے جس کے تحت جون 2022 تک گردشی قرضہ 1890 ارب روپے تک ہو جائے گا۔

پیٹرولیم ڈویژن کے مطابق حکومت اس سال موسم سرما میں گیس کی فراہمی کے انتظام کے لیے قدرتی گیس کی فراہمی اور پالیسی کے متعدد اختیارات پر غور کر رہی ہے، اسی سلسلے میں کابینہ کمیٹی نے پیٹرولیم ڈویژن کو ہدایت کی ہے کہ اس دوران ڈیمانڈ مینجمنٹ پلان پر عمل درآمد کے ساتھ ساتھ زیادہ سے زیادہ سپلائی کو یقینی بنایا جائے۔

فیصلہ کیا گیا کہ اہم صنعتوں کے لیے گیس کی قومی ضروریات کو ترجیح دی جائے گی۔ اس کے بعد ترجیحی طور پر گھریلو صارفین کو ایڈجسٹ کرنے کی زیادہ سے زیادہ کوششیں کی جائیں گی۔

شدید سردی کی صورت میں سی این جی، سیمنٹ، جنرل انڈسٹری (نان ایکسپورٹ) اور ایکسپورٹ انڈسٹری کے کیپٹیو پلانٹس سے کم کی جانے والی گیس کو ملکی سیکٹر کی طرف موڑ دیا جائے گا۔

گردشی قرضے میں کمی بین الاقوامی مالیاتی فنڈ کی طرف سے پیش کردہ شرائط میں سے ایک ہے۔ آئی ایم ایف نے ترسیل کی لاگت کو کم کرکے اور پاور سیکٹر میں زیادہ مسابقت متعارف کروا کر گردشی قرضے میں کمی کا مطالبہ کیا ہے۔

WhatsApp FaceBook
تازہ ترین
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube