Friday, October 22, 2021  | 15 Rabiulawal, 1443

وزیرخزانہ کا آئی ایم ایف پروگرام جاری رکھنے کاعزم

SAMAA | - Posted: Sep 27, 2021 | Last Updated: 4 weeks ago
SAMAA |
Posted: Sep 27, 2021 | Last Updated: 4 weeks ago

وزیر خزانہ شوکت ترین سے پاکستان کیلئے آئی ایم ایف کے نئے نمائندے نے ملاقات کی جس میں انٹرنیشنل مانیٹری فنڈز کی جانب سے پاکستان کی اسمارٹ اور ٹارگٹڈ لاک ڈاؤن پالیسی کی تعریف کی گئی۔ شوکت ترین نے آئی ایم ایف پروگرام جاری رکھنے کے عزم کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ اگلا معاشی جائزہ بھی کامیابی سے مکمل ہونے کا امکان ہے۔

وزیر خزانہ شوکت ترین اور آئی ایم ایف کے نئے نامزد کنٹری نمائندہ ایستر پیریز روئز کی اسلام آباد میں ملاقات ہوئی، جس میں پاکستان کی معاشی صورتحال اور آئی ایم ایف کی مالی معاونت پر تبادلہ خیال ہوا۔
وزیر خزانہ نے کرونا سے پیدا مشکل حالات میں آئی ایم ایف کی جانب سے پاکستان کی مالی معاونت کو سراہا اور کہا کہ حکومت آئی ایم ایف پروگرام جاری رکھنے کیلئے پُرعزم ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ امید ہے آئندہ جائزہ مذاکرات اور آرٹیکل فور کے تحت مشاورت کو کامیابی سے مکمل کیا جائے گا، غذائی اجناس کی قیمتوں میں کمی کیلئے انتظامی، پالیسی اور امداد پر مبنی اقدامات جاری ہیں۔

شوکت ترین نے کہا کہ تمباکو سیکٹر میں ٹریک اینڈ ٹریس سسٹم پر یکم اکتوبر سے عملدرآمد شروع ہوجائے گا، گردشی قرضے سے نمٹنے کیلئے توانائی شعبے میں اصلاحات جاری ہیں، ایف بی آر نے حالیہ مہینوں میں کرونا کے باوجود ہدف سے زیادہ ٹیکس جمع کیا۔
وزیر خزانہ کا کہنا ہے کہ کثیر الجہتی حکمت عملی کے ذریعے ٹیکس نیٹ میں اضافہ حکومت کی ترجیح ہے۔

نمائندہ آئی ایم ایف نے عوامی زندگی اور معاشی صورتحال میں توازن قائم کرنے کیلئے پاکستان کی اسمارٹ اور ٹارگٹڈ لاک ڈاؤن پالیسی کو سراہا۔ انہوں نے حکومت پاکستان کے ساتھ مل کر کام کرنے کے عزم کا اظہار کیا۔ ملاقات میں آئی ایم ایف کی سبکدوش ہونیوالی نمائندہ ماریہ ٹریسا بھی موجود تھیں۔

WhatsApp FaceBook
تازہ ترین
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube