Monday, September 20, 2021  | 12 Safar, 1443

پاکستانی چاولوں میں کرونا کی موجودگی کا انکشاف،چین نے برآمد بند کردی

SAMAA | - Posted: Jul 27, 2021 | Last Updated: 2 months ago
SAMAA |
Posted: Jul 27, 2021 | Last Updated: 2 months ago

فائل فوٹو

مشیر تجارت زراق داؤد کا کہنا ہے کہ پاکستان کے چاول اور مچھلی کی بوریوں کی تہہ میں کرونا وائرس کے شواہد ملنے پر چین نے پاکستانی برآمد بند کردی ہے۔

وزرات تجارت کی اسٹریٹجک تجارتی پالیسی فریم ورک پر مشیر تجارت عبدالرازق داؤد کی جانب سے منگل 27 جولائی کو کمیٹی اجلاس میں اس بات کا انکشاف کیا گیا کہ کرونا کے باعث چین نے پاکستانی چاول اور مچھلئی کی برآمد بند کردی ہے۔ زراق داؤد کا کہنا ہے کہ پاکستانی چاول کی بوریوں کے نيچے کرونا وائرس پایا گیا۔ چین ڈر گیا اور اس نے پاکستان سے چاول کی درآمد بند کردی ہے۔

انہوں نے یہ بھی کہا کہ مچھلی کی 6 کمپینز کی پیکنگ میں بھی وائرس پایا گیا ہے۔ چین نے 6 کمپینز سے کرونا کی موجودگی کے باعث درآمد بند کی۔ چاول کی بوری کے پیندے کے باہر ڈیڈ وائرس تھا۔

کمیٹی اجلاس میں موبائل کی برآمدات سے متعلق مشیر تجارت نے کہا کہ اگلے سال جنوری 2022 میں پاکستان موبائل کی برآمدات شروع کردیگا۔ چینی کمپنی کے تیار کردہ موبائل کی برآمدات شروع کریں گے۔ خواہش تھی کہ سام سنگ موبائل آئے۔ ہم نے کمپنی کو دوبار پاکستان آنے کا کہنا تھا تاہم انہوں نے معذرت کرلی، جب کہ چین کی کمپنی کراچی میں فیکٹری لگا رہی ہے۔

انہوں نے مزید بتایا کہ رواں سال سی فوڈز کے ٹیرف میں کمی لائیں گئے۔ پاکستان کی برآمدات بہت محدود شعبوں پر مشتمل ہے۔ انجینیرنگ گڈز، ادویات، گوشت پولٹری سمیت 11 نئے شعبے لا رہے ہیں۔ اس موقع پر ڈی جی ٹریڈ پالیسی نے کہا کہ گزشتہ دو تجارتی پالیسی میں تجارتی اہداف حقیقت پسندانہ نہ تھے۔ برآمدی ٹارگٹ بہت زیادہ رکھے گئے تھے، جن کا حصول ممکن نہ تھا۔ گزشتہ تجارتی پالیسوں میں چین، یورپی یونین سمیت 3 مارکیٹ پر توجہ تھی۔

WhatsApp FaceBook
تازہ ترین
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube