Monday, October 19, 2020  | 1 Rabiulawal, 1442
ہوم   > معیشت

کراچی، منی لانڈرنگ میں ملوث نجی کمپنی بے نقاب

SAMAA | - Posted: Sep 23, 2020 | Last Updated: 4 weeks ago
SAMAA |
Posted: Sep 23, 2020 | Last Updated: 4 weeks ago

ایف بی آر نے کراچي ميں انتہائی منظم انداز ميں کالا دھن سفيد کرنيوالی نجی کمپنی کا سُراغ لگا لیا۔ پرائیوٹ کمپنی نے ایل پی جی کی اسمگلنگ سے ایک ارب 70 کروڑ 50 لاکھ روپے کا ٹیکس چوری کیا۔

نجی کمپنی انتہائی منظم انداز میں تافتان سرحد سے اسمگل ایل پی جی خرید رہی تھی جس کا ایف بی آر نے بالآخر کھوج لگا ہی لیا۔ نجی ایل پی نجی کمپنی اکاؤنٹنگ پیچیدگیوں اور منظم مالی جرائم کے ذریعے منی لانڈرنگ اور ٹیکس چوری کررہی تھی۔

منی لانڈرنگ کیلئے گمنام کمپنیوں کے نیٹ ورک کے ساتھ خفیہ لین دین کیا جارہا تھا۔ نیٹ ورک نجی کمپنی کے چیف آپریٹنگ اور چیف فنانشل آفیسرز کی مدد سے چلایا جارہا تھا۔ اسمگل شدہ ایل پی جی سے کمپنی نے ایک ارب 70 کروڑ 50 لاکھ روپے ٹیکس چوری کیا۔

یہ بھی پڑھیں: ذولفقار علی بھٹو کی مولانا مودودی سے آخری ملاقات کا احوال

ایف بی آر کے مطابق ملزموں نے ٹیکس چوری اور منی لانڈرنگ سے اربوں کی جائیدادیں بنائیں۔ دو سالوں میں ڈیرھ ارب سے زائد مالیت کی سیلز چھپائی گئیں۔

ملزموں نے کئی غیرفعال کمپنیز بنارکھی تھیں جن سے رقوم نکال کر انہیں قانونی قرار دیا گیا۔ رپورٹ کے مطابق 2015 میں نیشنل بینک سے فنڈ حاصل کرکے کمپنی کی خریداری میں فراڈ کرکے ایک ارب کا کیپٹل گین چھپایا گیا

ایف بی آر انٹیلی جنس ڈائریکٹوریٹ کی جانب سے دائر ریفرنس پر کسٹم کی خصوصی عدالت نے ملزمان کے 9 اکاؤنٹ منجمد کرنے کا حکم دے دیا۔ نجی کمپنی کے کرتا دھرتاؤں کے ناقابل ضمانت گرفتاری کے احکامات بھی جاری کردیےگئے۔ کیس میں شامل بیرونی آڈیٹر اور بینک سے مزید تفتیش کی جارہی ہے۔

WhatsApp FaceBook

آپ کے تبصرے :

Your email address will not be published.

متعلقہ خبریں
WhatsApp FaceBook
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube