Friday, October 23, 2020  | 5 Rabiulawal, 1442
ہوم   > معیشت

ثالثی فورم اکسیڈنےپاکستان کاریکوڈک پرجرمانے پرحکم امتناع مستقل کردیا

SAMAA | - Posted: Sep 18, 2020 | Last Updated: 1 month ago
SAMAA |
Posted: Sep 18, 2020 | Last Updated: 1 month ago

پاکستان کی کامیابی

ریکوڈک کے معاملے پرعالمی بینک کےثالثی فورم اکسیڈ نےپاکستان کو6 ارب ڈالر جرمانے پرحکم امتناع مستقل کردیا۔

انٹرنیشنل سینٹرفارسیٹلمنٹ آف انویسٹمنٹ ڈسپیوٹ میں پاکستان کواہم قانونی کامیابی ملی ہے۔جولائی 2019 میں اکسیڈ ٹریبونل نے آسٹریلوی کمپنی ٹیتھیان کےحق میں فیصلہ دیا تھااور پاکستان کو6 ارب ڈالرز ادا کرنے کا حکم دیا گیا تھا۔

اٹارنی جنرل آفس نے ٹریبونل کا فیصلہ قانونی ٹیم کی بڑی کامیابی قرار دیا ہے۔اس معاملے پرحتمی سماعت مئی 2021 میں ہوگی۔اٹارنی جنرل آفس سے مزید بتایا گیا کہ پاکستان نے6ارب ڈالرزجرمانہ کالعدم قراردینےکیلئےقانونی کارروائی شروع کی، اکسیڈنے6ارب ڈالرجرمانےکی ادائیگی روکنےکاعبوری حکم امتناع دیاتھا، اپریل2020میں حکم امتناع مستقل کرنےکی سماعت ویڈیولنک پرہوئی اور گزشتہ روزاکیسڈنےپاکستان کےحق میں حکم امتناع کومستقل کرنےکاحکم دیدیا۔

واضح رہےکہ پاکستان کو آئی سی ایس آئی ڈی کےعائد کردہ ہرجانے کی رقم چلی اور کینیڈا کی مائننگ کمپنی ٹیتھیان کو ادا کرنا تھی۔پاکستان کی حکومت کو معاہدے کی پاسداری نہ کرنے پر4ارب ڈالر ہر جانہ جبکہ سود اور دیگر اخراجات کی مد میں پونے 2ارب ڈالر ادا کرنے کا کہا گیا تھا۔وزیراعظم عمران خان نے معاملے کی تحقیقات کا حکم بھی دیا تھا۔

چیئرمین سی پیک اتھارٹی عاصم سلیم باجوہ نے ٹویٹ کرتے ہوئے کہا ہے کہ عالمی بنک ٹربیونل کا ریکوڈک کیس میں پاکستان کے حق میں فیصلہ بڑا ریلیف ہے۔ٹربیونل نے پاکستان کو 6ارب ڈالر کا جرمانہ ادا کرنے سے روک دیا ہے۔

عاصم سلیم باجوہ نےکہا کہ وزیراعظم نے بلوچستان حکومت کوکان کنی کے فروغ کیلئے ہدایات بھی دی ہیں،کان کنی کی ترقی اور منظم اندازمیں امور کی انجام دہی کیلئے اقدامات کئے جارہےہیں۔

WhatsApp FaceBook

آپ کے تبصرے :

Your email address will not be published.

متعلقہ خبریں
WhatsApp FaceBook
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube