Monday, January 24, 2022  | 20 Jamadilakhir, 1443

اسٹاک مارکیٹ: شدید مندی کے باعث ٹریڈنگ پھر معطل

SAMAA | - Posted: Mar 12, 2020 | Last Updated: 2 years ago
SAMAA |
Posted: Mar 12, 2020 | Last Updated: 2 years ago

فوٹو: اے ایف پی

پاکستان اسٹاک ایکسچینج میں کاروبار کے دوران شدید مندی کے بعد ٹریڈنگ ہفتے میں دوسری مرتبہ 45 منٹ کےلیے معطل کی گئی۔

جمعرات 12 مارچ کو اسٹاک مارکیٹ میں شدید مندی کے باعث 100 انڈیکس 36 ہزار 400 کی سطح سے نیچے آگیا جس کے بعد ٹریڈنگ روک دی گئی۔

کاروبار کے دوران 100 انڈیکس میں 4 فیصد کی کمی ہونے سے 1324 پوائنٹس گر گئے۔ شئیرز کی قیمت کم ہونے سے مارکیٹ کیپٹلائزیشن میں 185 ارب روپے کی کمی ہوئی۔

مارکیٹ دوبارہ کھلنے کے بعد بھی مندی کا شکار رہی۔ 100 انڈیکس 1777 پوائنٹس کی کمی کے بعد 36 ہزار کی سطح سے نیچے آگیا۔

اسٹاک مارکیٹ کے اصول کے مطابق اگر مارکیٹ کاروبار کے دوران 4 فیصد سے اوپر یا نیچے چلی جائے تو ٹریڈنگ 45 منٹ کےلیے معطل کر دی جاتی ہے تاکہ سرمایہ کار نئے انداز میں کام شروع کریں۔

گزشتہ روز قومی ادارہ صحت کی جانب سے کرونا وائرس کو عالمی وبا قرار دیا گیا جس کا اثر دنیا بھر کی اسٹاک مارکیٹس پر پڑا۔

سماء ڈیجیٹل سے گفتگو میں انٹر مارکیٹ سیکیورٹیز کے ڈائریکٹر ریسرچ رضا جعفری نے کہا کہ فی الحال صورتحال واضح نہیں اور خدشہ ہے کہ مارکیٹ 36 ہزار سے نیچے جاسکتی ہے۔

بدھ 11 مارچ کو مارکیٹ میں مثبت رجحان دیکھا گیا تھا جس کے بعد مارکیٹ 37 ہزار 673 پوائنٹس پر بند ہوئی تھی۔

اسٹاک مارکیٹ میں منفی رجحان کے بعد انٹر بینک میں ڈالر 8 ماہ کی بلند سطح پر پہنچ گیا۔

فاریکس ڈیلرز کے مطابق ڈالر 53 پیسے مہنگا ہونے سے 158.42 سے بڑھ کر 158.95 روپے پر پہنچ گیا۔ گزشتہ 4 روز میں انٹربینک میں ڈالر 4 روپے 71 پیسے مہنگا ہوا۔

انٹربینک کے بعد اوپن مارکیٹ میں بھی ڈالر ایک روپے مہنگا ہوکر 8 ماہ بعد 159 روپے کا ہوگیا۔ چار روز میں اوپن مارکیٹ میں ڈالر 4 روپے 70 پیسے مہنگا ہوا۔

واضح رہے کہ کرونا وائرس کے باعث دنیا بھی کی اسٹاک مارکیٹیں گر چکی ہیں جبکہ عالمی منڈی میں تیل کی قیمتیں بھی 1991 کے بعد سے کم ترین سطح پر آگئی ہیں۔

WhatsApp FaceBook
تازہ ترین
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube