ایران کے ساتھ باہمی اقتصادی تعاون مضبوط بنانا چاہتے ہیں، وزیراعظم

Samaa Web Desk
March 12, 2018

اسلام آباد : وزیراعظم شاہد خاقان عباسی کا کہنا ہے کہ پاکستان مشترکہ ترقی اور خوشحالی کیلئے پُرامن اور باہمی طور پر مربوط خطے کے اپنے وژن پر عمل پیرا ہے، پُرامن اور مستحکم افغانستان خطے کی اقتصادی ترقی کیلئے اہمیت کا حامل ہے، دوطرفہ تجارت، سرمایہ کاری اور تجارتی روابط سمیت مختلف شعبوں میں ایران کے ساتھ باہمی اقتصادی تعاون کو مضبوط بنانے کی خواہش رکھتے ہیں۔

وزیراعظم شاہد خاقان عباسی نے ان خیالات کا اظہار ایران کے وزیر خارجہ ڈاکٹر جواد ظریف سے ملاقات کے دوران گفتگو کرتے ہوئے کیا، ملاقات کے دوران دونوں رہنماؤں نے دوطرفہ تعلقات کو مضبوط بنانے اور خطے میں امن اور سلامتی سے متعلق امور پر تبادلہ خیال کیا۔

 وزیراعظم شاہد خاقان عباسی نے کہا ہے کہ پاکستان مشترکہ ترقی اور خوشحالی کیلئے پُرامن اور باہمی طور پر مربوط خطے کے اپنے وژن پر عمل پیرا ہے، پُرامن اور مستحکم افغانستان خطے کی اقتصادی ترقی کیلئے اہمیت کا حامل ہے، اس ہدف کے حصول کیلئے پڑوسی ممالک ہونے کے ناطے پاکستان اور ایران اہم کردار ادا کر سکتے ہیں، دوطرفہ تجارت، سرمایہ کاری اور تجارتی روابط سمیت مختلف شعبوں میں ایران کے ساتھ باہمی استفادہ کے حامل اقتصادی تعاون کو مضبوط بنانے کی خواہش رکھتے ہیں۔

وزیراعظم نے کہا کہ پاکستان اور ایران کے درمیان 2021ء تک دوطرفہ تجارت کے حجم کو 5 ارب ڈالر سالانہ کی سطح پر پہنچانے کے ہدف کے حصول کیلئے دونوں ممالک کو مل کر بامقصد اقدامات کرنا ہوں گے۔

شاہد خاقان عباسی نے علاقائی اقتصادی استحکام سے استفادے کیلئے دونوں ممالک کے درمیان رابطوں کو فروغ دینے پر زور دیا، انہوں نے پاک ایران گیس پائپ لائن منصوبہ کو عملی شکل دینے کے ضمن میں متعلقہ امور بشمول پائپ لائن کے بنیادی ڈھانچے کیلئے مالی وسائل اور اسنیپ بیک شق کے حل کیلئے کام کرنے کے عزم کا اعادہ کیا۔

وزیراعظم نے کہا کہ ہم اس بات پر یقین رکھتے ہیں کہ پرامن اور مستحکم افغانستان خطے کی اقتصادی ترقی کیلئے اہمیت کا حامل ہے، اس ہدف کے حصول کیلئے پڑوسی ممالک ہونے کے ناطے پاکستان اور ایران اہم کردار ادا کرسکتے ہیں۔