Sunday, October 24, 2021  | 17 Rabiulawal, 1443

ڈھائی سال سے التوا کا شکار آٹو پالیسی منظور

SAMAA | - Posted: Mar 18, 2016 | Last Updated: 6 years ago
SAMAA |
Posted: Mar 18, 2016 | Last Updated: 6 years ago

auto-policy
اسلام آباد : اقتصادی رابطہ کمیٹی نے ڈھائی سال سے تعطل کا شکار آٹو پالیسی کو بالا آخر منظور کرلیا، مراعات دینے کے بعد گاڑیوں کی قیمتوں میں کمی کا امکان ہے۔ اسلام آباد میں وفاقی وزیر خزانہ اسحاق ڈار کی زیر صدارت کابینہ کی اقتصادی رابطہ کمیٹی کا اجلاس ہوا، اجلاس میں ڈھائی سال سے التوا کا شکار 5 سالہ آٹو پالیسی کی منظوری دی گئی، جس کا باقاعدہ اعلان 21 مارچ کو کیا جائے گا۔

وزارت خزانہ کے اعلامیے کے مطابق نئی آٹو پالیسی کے ذریعے ملک میں آٹو سیکٹر میں سرمایہ کاری کو فروغ دیا جائے گا،جس سے مقابلے کی فضا اور صارفین کی بہبود کو یقنی بنایا جائے گا۔

اقتصادی رابطہ کمیٹی نے پی آئی اے کے لیے حکومتی ضمانت کی حد 146ارب روپے سے بڑھا کر 151 ارب کر نے کی بھی منظوری دی ہے۔

کمیٹی نے لوہے اور اسٹیل کی درآمد پر تیس جون تک پندرہ فیصد اضافی ریگولیٹری ڈیوٹی عائد کرنے جب کہ ایلومینیم کی درآمد پر دس فیصد ریگولیٹری ڈیوٹی عائد کر دی ہے، کمیٹی نے گندم اور آٹا برآمد کرنے کی تاریخ میں پندرہ جون تک توسیع کی بھی منظوری دے دی ہے۔

اجلاس میں نان فائلرز کے لیے بینکوں میں لین دین پر عائد ود ہولڈنگ ٹیکس کی شرح صفر اعشاریہ چار فیصد کو اکتیس مارچ تک توسیع دے دی گئی ہے۔ اجلاس میں تیس جون تک آئرن اسٹیل اور ایلومینیم کی درآمد پر پندرہ فیصد اضافی ریگولیٹری ڈیوٹی عائد کرنے کی بھی منظوری دی گئی ہے، جب کہ سندھ حکومت اور وزارت تحفظ خوراک کی سفارش پر گندم کی برآمد پر تین ماہ کی مزید توسیع دے دی گئی ہے جس کے بعد گندم پندرہ جون تک برآمد کی جاسکے گی۔ اجلاس میں وزارت دفاع کے نیکوپ منصوبے کے لیے تراسی لاکھ ڈالرز کی حکومتی ضمانت اور ٹی این بی لبرٹی کے لیے پینتالیس ایم ایم سی یومیہ گیس کی فراہمی کی بھی منظوری دے دی گئی ہے۔ سماء

WhatsApp FaceBook
تازہ ترین
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube