ہوم   >  بلاگز

عمران خان مشکل کھیل کھیلنے کی کوشش کررہے ہیں

1 month ago

سابق گورنر پنجاب اور پاکستان پیپلز پارٹی کےرہنما سلمان تاثیرکے صاحبزادے آتش تاثیر نے امریکی میگزین “وینیٹی فیئر” کے لیے لکھے گئے آرٹیکل میں پاکستان کے وزیراعظم عمران خان کی ذاتی وسیاسی زندگی کے بہت سے پہلوؤں کا احاطہ کیا ہے۔

آتش تاثیر بھارتی صحافی اور رائٹر تلوین سنگھ کے صاحبزادے ہیں ۔ سلمان تاثیر اور تلوین نے شادی کے کچھ عرصے بعد ہی اختلافات کی بنیاد پر علیحدگی اختیار کرلی تھی۔

قدرے متنازع اس آرٹیکل میں آتش تاثیرنے عمران خان کے نوجوانی کے دور ، روحانیت کی جانب راغب ہونا، دھرنے کا دور، بشریٰ بی بی سے شادی، اور اسلامی فلاحی ریاست کے خواب کی تکمیل میں درپیش مشکلات سمیت ذاتی وسیاسی سبھی موضوعات کا احاطہ کیا ہے۔

آتش تاثیر کے مطابق عمران خان کی ذاتی زندگی پاکستانی معاشرے کے اخلاقی اور ثقافتی شیزوفرینیا (پراگندہ ذہنی ) کو قریب سے ظاہر کرتی ہے۔ آتش تاثیر کے آرٹیکل کا عنوان ہے  وہ ایک مشکل کھیل کھیلنے کی کوشش کر رہا ہے۔

آتش تاثیر کے طویل ترآرٹیکل میں سے کچھ اہم نکات کا ذکر پڑھیے۔

خواتین عمران خان کی دیوانی تھیں

آتش تاثیر نے لاہور میں مقیم سماجی شخصیت اور اپنے انکل یوسف صلاح الدین کا حوالہ دیتے ہوئے لکھا کہ انہوں نے لاہور میں مجھے بتایا تھا کہ ’’عمران خان خواتین کی پسندیدہ ترین شخصیت تھے، میں نے بھارت میں 6 سے 60 سال کی عمر کی خواتین کو ان کے لیے دیوانہ دیکھا ہے‘‘۔ 43 سال کی عمر میں عمران خان نے جمائما گولڈ اسمتھ سے شادی کی جو ایک ٹائیکون جمی گولڈ اسمتھ کی بیٹی تھیں، جس کا اپنے داماد کے بارے میں کہنا تھا کہ ’’وہ ایک بہترین پہلا شوہر بنے گا‘‘۔

آتش تاثیر نے لکھا” پاکستان کے مشہور لکھاری محسن حامد نے لاہورمیں مجھے بتایا تھا کہ ’’ عمران خان آزادانہ مردانگی کی علامت تھے” ۔

بشریٰ مانیکا کا خواب

آرٹیکل میں آتش تاثیر نے عمران خان کی تیسری اہلیہ اور ان کے وزیراعظم بننے میں اہم کردار ادا کرنے والی بشریٰ بی بی سے متعلق لکھا کہ 20 سال سے عمران خان اپنے دوستوں اور خیرخواہوں کو بتا رہے تھے کہ ’’ اگلی بار جب آپ پاکستان آئیں گے تو میں وزیراعظم ہوں گا‘‘۔ لیکن 4 انتخابات آئے اور چلے گئے، 2 شادیاں ناکام ہوئیں لیکن یہ خواہش پوری ہوتی نظرنہیں آرہی تھی۔ پھراس کے بعد بشریٰ مانیکا نے یہ خواب دیکھا۔

مشہور ٹی وی سیریز ’’گیم آف تھرونز ‘‘ کے کردار اسٹینس باراتھیون کی طرح خان نے حقیقی زندگی میں روحانی رہنمائی کے لیے میلاسینڈر( ریڈ ویمن ) یعنی پنکی کی جانب دیکھنا شروع کردیا تھا۔ بشریٰ بی بی کے خواب میں آنے والی آواز واضح تھی، اگرعمران خان وزیراعظم بننا چاہتے تھے تو یہ ضروری تھا کہ ان کی شادی درست خاتون سے ہو یعنی جس کا تعلق مانیکا خاندان سے ہو۔

انہیں عمران خان چاہیئے تھا

آتش تاثیر کے مطابق بشریٰ مانیکا نے پہلے عمران خان کو اپنی بہن سے شادی کروانے کی پیشکش کی جبکہ یہ بھی کہا گیا کہ اپنی بیٹی سے شادی کروانے کی پیشکش کی تھی لیکن خان نے پس وپیش سے کام لیا۔ پھر بشریٰ مانیکا نے دوبارہ خواب دیکھا، اس بار یہ واضح تھا کہ عمران خان کو جس بیوی کی ضرورت تھی وہ ایک شادی شدہ خاتون اور 5 بچوں کی ماں بشریٰ مانیکا تھی۔ بشریٰ مانیکا کو اب وہی چاہیے جو کبھی ہرعورت چاہتی تھی۔ انہیں عمران خان چاہیے تھا۔

عمران خان نے کبھی بشری مانیکا پرنظرنہیں رکھی تھی کیونکہ وہ اپنے مریدوں سے پردے میں رہ کر بات کرتی تھیں۔ لیکن اب کی بارعمران خان راضی ہوگئے، ستارے منسلک ہوئے اور بشریٰ کے شوہر جو کہ ایک کسٹم آفیسر ہیں، عمران خان کو اپنے روحانی خاندان کا مرید قرار دیتے ہوئے بشریٰ کو طلاق دینے پرراضی ہوگئے۔فروری 2018 میں ایک نجی تقریب میں عمران خان کی شادی ہوگئی اور 6 ماہ بعد وہ پاکستان کے وزیراعظم منتخب ہوئے ۔

بشریٰ مانیکا کے پاس 2 جن تھے

آتش تاثیر نے آرٹیکل میں دعویٰ کیا کہ کراچی میں میڈیا سے تعلق رکھنے والی ایک سینیئر شخصیت نے مجھے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بتایا کہ بشریٰ بی بی کے قبضے میں 2 جن تھے اور غیب بینی کے اس علم کا معاوضہ پکے ہوئے گوشت کے بڑے ٹکڑے تھے جو وہ جنوں کو کھلاتی تھیں۔

عمران خان کا انٹرویو سے انکار

آتش تاثیر نے اپنے آرٹیکل میں یہ بھی بتایا کہ وزیراعظم عمران خان نے مجھے انٹرویو دینے سے انکارکر دیا تھا۔ وزیراعظم کے معاون خصوصی برائے اوورسیز پاکستانی کو لندن میں اکثرنائٹ کلب میں جانے والا کہتے ہوئے آتش تاثیر نے لکھا کہ زلفی بخاری سے عمران خان کے انٹرویو کیلئے بات ہوئی تھی ۔ انہوں نے یقین دہانی مانگی کہ میں اس حوالے سے مثبت لکھوں گا۔ چند دن بعد زلفی بخاری نے مجھے واٹس ایپ پر بتایا کہ بدقسمتی سے وزیراعظم نے ابھی انٹرویو دینے سے انکار کردیا ہے۔

بینظیر کی موت پرعمران خان کا ردعمل

آتش تاثیر کے مطابق جب 2007 میں سابق وزیراعظم بینظیر بھٹو کا قتل ہوا تو عمران خان چند دن بعد ایک فرینچ گرل فرینڈ کے ہمراہ پاکستان آئے تھے اور تیراکی کے لباس میں سوئمنگ پول کے قریب ان کی تصویر بھی کھینچی گئی تھی۔ یہ سب ایسے وقت میں ہوا جب ان کا ملک صدمے میں تھا۔

آتش تاثیر نے لکھا کہ بینظیر والے حادثےکے بعد عمران خان سے علیحدگی میں ملاقات ہوئی تو ان کا کہنا تھا کہ اللہ نے بینظیر کو بچا لیا۔ عمران خان کے مطابق بینظیر بھٹو پرویز مشرف کے ساتھ ڈیل کرنے والی تھیں اس لیے یہ چیز ان کیلئے نعمت بن کر آئی ۔ آتش تاثیر کے مطابق ’’یہ چیز‘‘ سے متعلق میرے استفسار پر عمران خان نے جواب دیا ’’موت ‘‘۔ آرٹیکل میں دعویٰ کیا گیا ہے کہ عمران خان نے قدرے حاسدانہ انداز میں کہا کہ بینظیر شہید ہو چکی ہیں، وہ لازوال ہوچکی ہیں‘‘۔

میں لبرل ہوں

پاکستانی گلوکار علی ظفر کو عمران خان کا قریبی دوست اور پاکستان کا سب سے بڑا پاپ اسٹار کہتے ہوئے آتش تاثیر نے لکھا کہ علی ظفر نے مجھے بتایا عمران خان کا سختی سے ماننا ہے کہ ہمیں ذہنی طور پر مغرب کی غلامی چھوڑنی ہوگی اور اپنی جگہ ، اپنی شناخت ، اپنی چیز ، اپنی ثقافت ، اپنی جڑیں تلاش کرنا ہوں گی۔

عمران خان نے ان کے سامنے خود کو لبرل کہا۔عمران خان نے علی ظفر کو بتایا کہ تم مجھے جانتے ہو، میں ایک لبرل ہوں ، میرے دوست پاکستان اور بھارت میں ہیں۔ میرے دوستوں میں لامذہب افراد بھی شامل ہیں۔

فرحان ورک “یوتھیا” کیوں بنے؟

آتش تاثیر نے پی ٹی آئی کے سرگرم کارکن فرحان ورک کا ذکر بھی کیا۔ انہوں نے لکھا کہ میڈیکل کا ایک نوجوان طالب علم فرحان ورک بھی دھرنے میں شامل تھا۔ اگست 2017 میں ایک رات کریک ڈاؤن ہوا ۔ ورک نے مجھے اسکائپ پر بتایا کہ حکومت نے ربڑ کی گولیاں برسائیں اورآنسوگیس کے شیل پھینکے ، بہت سے مظاہرین بھاگ گئے لیکن عمران خان وہیں کھڑے رہے تو میں نے سوچا اگر ان حالات میں بھی یہ یہاں کھڑے رہ سکتے ہیں تو اس کا کچھ تو مطلب ہے۔

آتش تاثیر نے لکھا ” کریک ڈاؤن کے ذریعہ خود کو بنیاد پرست سمجھنے اور عمران خان کی ذاتی جرات کے مظاہرے سے فرحان ورک “یوتھیا” بن گیا۔ ورک عمران خان کے دیوانے حمایتیوں میں سے ایک ہے جو سوشل میڈیا پر سرگرم ہیں اور جن کا موازنہ انٹرنیٹ پر ٹرمپ کے حامیوں سے کیا جاسکتا ہے۔

Curated by Kokab Mirza.

 

آپ کے تبصرے

Your email address will not be published.

 
متعلقہ خبریں
 
 
 
 
 
 
 
 
مقبول خبریں