فاسٹ فوڈز کھانا مضر صحت ہے

Dr Tanweer Sarwar
September 5, 2018

روح زمین پر ہر جاندار کو زندہ رہنے کے لئے ہوا،پانی اور غذا کی ضرورت ہوتی ہے جہا ں تک غذا کا تعلق ہے تو صحت مند غذا ہی ہماری اچھی صحت کی ضمانت ہوتی ہے آج کے مصروف دور میں جہاں لوگوں کا طرز زندگی تبدیل ہوا ہے و ہاں کھانے کے انداز بھی بدل چکے ہیں کچھ لوگ وقت کی کمی کا رونا روتے ہیں اور فاسٹ فوڈز کھاتے ہیں لیکن ہمارے ہاں نوجوان طبقہ فاسٹ فوڈز کھانا پسند کرتا ہے،اسی وجہ سے اب گلی گلی ،بازار بازار فاسٹ فوڈز کا کاروبار ہو رہا ہے۔

فاسٹ فوڈز کھانے سے یقیناً ہماری صحت خراب ہو جاتی ہے فاسٹ فوڈز کے مستقل استعمال سے وزن میں اضافہ ہو جاتا ہے اور موٹاپا طاری ہو جاتا ہے اوتر موٹاپے کی وجہ سے ہمیں کئی دوسری بیماریاں گھیر لیتی ہیں اس کے علاوہ فاسٹ فوڈز ہماری ذہنی صحت کو بھی نقصان پہنچاتے ہیں فاسٹ فوڈز کا زیادہ استعمال کرنے والے لوگ ذہنی ڈپریشن کا شکار ہو سکتے ہیں جو لوگ فاسٹ فوڈز کا استعمال نہیں کرتے یا کبھی کھبار کرتے ہیں ان میں اس طرح کی علامات کم دیکھنے میں ملتی ہیں اگر آپ کم مقدار میں بھی فاسٹ فوڈز باقاعدگی سے کھاتے ہیں تو ممکن ہے کہ آپ بھی ڈپریشن کا شکار ہو جائیں طلبہ اور ذہنی کام کرنے والے افراد فاسٹ فوڈز کا استعمال نہ کریں خاص طور پر اپنے بچوں کو اس سے دور رکھیں ۔

آج کل بازار میں طرح طرح کی اشیاء کھانے کو ملتی ہیں جن کی خوبصورت پیکنگ ہوتی ہے تاکہ یہ عام گاہک اور بچوں کو اپنی طرف مائل کرسکیں۔ ہمیں اپنی صحت کا خیال رکھتے ہوئے ایسی اشیاء کو ترک کرنا ہوگا اور ایسی غذا کا چناؤ کرنا ہوگاجو ہماری صحت کے لئے مفید ہو۔ اچھی صحت کے لئے صحت مند غذا کا ہونا ضروری ہے،خاص کر بچوں کے لئے ہمیں زیادہ احتیاط کی ضرورت ہوتی ہے۔ چھوٹے بچوں کی نسبت اسکول جانے والے بچوں کو غذا کی زیادہ ضرورت پڑتی ہے۔اکثر مائیں بچوں کو پیزا اور برگر وغیرہ لنچ بکس میں رکھ دیتی ہیں جو کہ کسی طرح بھی بچوں کے لئے مناسب غذا نہیں ہو سکتی۔ ضروری ہے کہ پڑھنے والے بچوں کے لنچ بکس میں پھلوں کو بھی شامل کیا جائے۔اس کےعلاوہ فاسٹ فوڈز کے بجائے گھر کے تیار کھانے انہیں دیے جائیں ، کیونکہ اچھی خوراک ہی بچوں کی ذہنی اور جسمانی صلاحیتوں کو اجاگر کرتی ہے ۔

اکثر دیکھا گیا ہے کہ ایسے بچے جو فاسٹ فوڈز کا استعمال کرتے ہیں وہ موٹے ہو جاتے ہیں کیونکہ ان کی غذا میں کیلریز کی مقدار زیادہ ہوتی ہے جس کی وجہ سے ان کے وزن میں دن بدن اضافہ ہو تا جاتا ہے جو آگے چل کر کئی مسائل اور بیماریوں کا سبب بن جاتا ہے اس کے لئے ضروری ہے کہ آپ اپنے بچے کی غذا پر خصوصی توجہ دیں اور اسے اندرونی گیمز کی بجائے بیرونی کھیلوں کی جانب راغب کریں اس کے علاوہ اپنے بچوں کے لئے ایسی غذاؤں کا چناؤ کریں جن میں کیلشیم،آئرن،فیٹ اور فولک ایسڈ موجود ہوتاکہ بچہ جسمانی اور ذہنی طور پر تندرست رہ سکے اور اس کے قد میں بھی مناسب اضافہ ہودیکھا گیا ہے کہ بچوں کی غذا مناسب نہ ہونے کی وجہ سے ان کے قد بڑھنے کی رفتار میں کمی واقع ہو جاتی ہے اس لئے ضروری ہے کہ ہم بچوں کے کھانے پینے کی عادات کو بدلیں بچوں کی خوراک میں دودھ،دہی،مکھن،پھل،گوشت اور سبزیوں کا استعمال ضروری ہے عالمی ادارہ صحت کے مطابق فاسٹ فوڈز کا مستقل یا زیادہ استعمال دمہ کا سبب بن سکتا ہے، ایک رپورٹ کے مطابق ہفتہ میں دو یا تین بار فاسٹ فوڈز کا استعمال کرنے والے نوجوانوں میں یہ شرح 40% تک ہو سکتی ہے ادارے کی رپورٹ کے مطابق فاسٹ فوڈز استعمال کرنے والے بچوں کو دمہ کے علاوہ خارش اور آنکھوں کی بیماریوں کا اندیشہ ہے اس لئے ہمیں اپنے بچوں کوحتی الامکان کوشش کرنی چاہیئے کہ انہیں فاسٹ فوڈز کھانے کی عادت سے محفوظ رکھیں تاکہ وہ ایک صحت مند اور چست زندگی گذار سکیں ۔