Saturday, September 26, 2020  | 7 Safar, 1442
ہوم   > بلاگز

بلوچستان کے ایم پی اے کا افغان شہری ہونے کا انکشاف

SAMAA | - Posted: Aug 6, 2018 | Last Updated: 2 years ago
Posted: Aug 6, 2018 | Last Updated: 2 years ago

 

بلوچستان اسمبلی کےحلقہ پی بی 26 سے کامیاب قرار دیئے گئے امیدوار احمد علی کوہزاد کے مبینہ طور پر افغان شہری ہونےکا انکشاف ہوا ہے۔ حیرت انگیز بات یہ ہے کہ اس نو منتخب رکن بلوچستان اسمبلی کا حلقے میں اپنا ووٹ بھی رجسٹرڈ نہیں ہے۔ لیکن نہ نادرا نے دھیان دیا اور نہ ہی الیکشن کمیشن نے علی احمد کوہزاد کا شناختی کارڈ چیک کرنے کی زحمت  کی، آخر کیوں؟ یہ ایسا سوال ہے جس کا جواب کسی کے پاس نہیں ہے۔ علی احمد کوہزاد کی خبر میڈیا پہ سامنے آنے پر سیاسی مبصرین نے تشویش کا اظہار کیا ہے اور علی احمد کوہزاد کے کیس نے الیکشن کمیشن کی کارکردگی پر ایک سوالیہ نشان لگا دیا ہے۔ خیال رہے کہ الیکشن کمیشن کی جانب سے انتخابات سے قبل اُمیدواروں کے شناخی کارڈ، اثاثہ جات اور دیگر تفصیلات بھی طلب کی جاتی ہیں۔ مگر حیرت کی بات ہے کہ اس مرتبہ بلوچستان سے الیکشن میں افغان شہری صوبائی اسمبلی کا ایم پی اے منتخب ہوگیا ہے۔ احمد علی کوہزاد ہزارہ قبیلے سے تعلق رکھنے والی قوم پرست جماعت ہزارہ ڈیموکریٹک پارٹی کے سیکریٹری جنرل ہیں۔

احمد علی کوہزاد صوبائی الیکشن میں سفید رنگ کے بیلٹ پیپر پر چاند کے نشان پر الیکشن لڑ رہے تھے جن کے مد مقابل بہت سارے لوگ تھے۔ الیکشن  پی بی 26 کوئٹہ 3 کے کل رجسٹرڈ ووٹرز  کی تعداد  57675  ہے جبکہ مرد ووٹرز کی تعداد 35338 اور خواتین ووٹرز کی تعداد 22337 ووٹرز ہے اس نشست پر احمد علی کوہزاد جیتے تھے جنہوں نے 5117 ووٹ حاصل کئے تھے جبکہ ان کا تعلق  ایچ ڈی پی ہزارہ ڈیموکرٹیک پارٹی سے تھا جبکہ ان کے مد مقابل ولی محمد 3242 ایم ایم اے کے تھے جبکہ تیسرے نمبر پر محمد طاہر خان 2704 آزاد سید ناصر علی شاہ 2157 بی این پی کے در محمد 1974 پی پی پی محمد مہدی 1361، پی کے میپ محمد ادریس 1052 پی ٹی آئی کے شامل تھے جبکہ باقی دوسرے تمام امیدوار ایک ہزار سے بھی کم ووٹ لے سکے تھے احمد علی کوہزاد نے 2013 کا انتخاب لڑنے کے علاوہ متعدد بار بلدیاتی انتخابات میں بھی حصہ لیا جن میں کسی بھی انتخاب کے دوران ان کی شہریت پر اعتراض نہیں کیا گیا تھا۔

کوئٹہ کے ڈپٹی کمشنر نے بلوچستان ہائی کورٹ میں جمع کرائے گئے اپنے خط میں انھیں’غیر پاکستانی‘ قرار دیا ہے۔بلوچستان ہائیکورٹ کے جسٹس نعیم اختر افغان اور جسٹس عبداللہ بلوچ پر مشتمل بینچ نے معاملے کی دوبارہ سماعت کی ڈپٹی  کمشنر کوئٹہ طاہر عباسی نے پی بی 26 سے ہزارہ ڈیموکریٹک پارٹی کے کامیاب امیدوار احمد علی کوہزار کا سارا پول کھول کر رکھ دیا۔ڈپٹی کمشنر کوئٹہ نے عدالت کو بتایا کہ نو منتخب رکن احمد علی کوہزاد نے ریکارڈ میں جعلسازی کی ہے اور وہ آئین کے 62،63 پر پورا نہیں اترتے ہیں۔ اس کی تاریخ پیدائش والدین کی وفات کے دو سال بعد کی ہے یعنی احمد علی کوہزاد 1979ء میں پیدا ہوا جبکہ اس کے والدین کا 1977ء میں ہی انتقال ہوچکا تھا۔ نادرا نے احمد علی کا شناختی کارڈ بلاک کیا تھا اور ریٹر نگ آفیسر نے کاغذات مسترد کردیئے تھے۔احمد علی نے کاغذات نامزدگی مسترد ہونے کے بعد الیکشن ٹریبونل سے رابطہ کیا تھا جس پر ٹربیونل نے انہیں انتخابات میں حصہ لینے کے لئے مشروط اجازت دی تھی ٹربیونل کی جانب سے احمد علی کو ہدایات جاری کی گئی تھیں کہ وہ 3 ماہ کے اندر شناختی کارڈ پیش کرے۔

 

WhatsApp FaceBook

آپ کے تبصرے

Your email address will not be published.

متعلقہ خبریں
WhatsApp FaceBook
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube