Wednesday, January 26, 2022  | 22 Jamadilakhir, 1443

بلوچستان کے خوبصورت ساحل

SAMAA | - Posted: Feb 22, 2017 | Last Updated: 5 years ago
Posted: Feb 22, 2017 | Last Updated: 5 years ago

Collage

شہری زندگی کی تیز رفتاری اور گہما گہمی میں انسان کو پرسکون ماحول اور پُرفضا مقام پر تفریح میسر آئے تو بہت بڑی نعمت ہے، اس سے صحت پر مثبت اثرات مرتب ہوتے ہیں اور ذہنی و جسمانی توانائی حاصل ہوتی ہے، ایسی ہی تفریح اور سیاحت کیلئے بلوچستان کے ساحلی علاقے بہترین ہیں، یہاں صاف ستھرے ساحل، سمندر کا چمکتا شفاف نیلا پانی آنکھوں کو قدرت کا حسین نظارہ دکھا کر پرسکون کرتا ہے، یہاں کا دل فریب منظر انسان کو پریشانیوں سے کوسوں دور ایک نئے جہاں میں لے جانے کیلئے کافی ہے۔

بلوچستان کے ساحلی علاقوں کیلئے حکومتوں کی جانب سے اگر باقاعدہ منصوبہ بندی کی جائے تو ان علاقوں میں سیاحت کو بھرپور فروغ دیا جاسکتا ہے اور اب تو اس بات کی قوی امید ہے کہ سی پیک کی بدولت ان علاقوں سے پسماندگی اور غربت کا خاتمہ ہوگا۔

اگر ہم کراچی سے بلوچستان کے ساحلوں کا سفر شروع کریں تو پہلا ساحل گڈانی کا ہے۔

Gadani
گڈانی

گڈانی کا ساحل بلوچستان کے ضلع لسبیلہ میں حب دریا کے قریب واقع کیپ مونزے کے نزدیک ہے، یہ کراچی سے تقریباً ڈیڑھ گھنٹے کی مسافت پر ہے، گڈانی کا ساحل کراچی کے ساحلوں سے کسی حد تک مماثلت رکھتا ہے مگر قدرے صاف ستھرا ہے، اس کے نزدیک دنیا کا تیسرا بڑا شپ بریکنگ یارڈ بھی ہے۔
sonmiani

سونمیانی

سونمیانی بلوچستان کے جنوب مشرق میں واقع ہے اور یہ کراچی سے 90 کلومیٹر کی مسافت پر ہے، سونمیانی کا ساحل حب کے نزدیک ہے، جہاں کراچی سے 2 گھنٹے میں پہچا جاسکتا ہے، سونمیانی کا ساحل پاکستان کا چوتھا ڈیپ سی پورٹ بھی ہے اور سیاحت کے حوالے سے کافی مشہور ہے۔
Kund Malir

کنڈ ملیر

کنڈ ملیر بلوچستان میں واقع صحرائی ساحل ہے جو کہ ہنگول نیشنل پارک کے نزدیک واقع ہے، یہ مکران کوسٹل ہائی وے پر زیرو پوائنٹ سے 145 کلو میٹر کی دوری پر ہے، کنڈ ملیر سے اورماڑہ کا سفر انتہائی حسین ہے، اس ساحل کا شمار دنیا کے خوبصورت ترین ساحلوں میں ہوتا ہے، زیرو پوائنٹ کے بعد کسی قسم کی بنیادی سہولیات جیسا کہ ہوٹل، ریستوران، پیٹرول پمپس، سی این جی اسٹیشن، موبائل فون سگنل نہ ہونے کے باوجود یہ ساحل اپنے پُرسکون، پُرامن ماحول کی وجہ سے دیکھنے سے تعلق رکھتا ہے، کنڈ ملیر کا کراچی سے فاصلہ 4 گھنٹے کا ہے۔
ormara 2

اورماڑہ

مکران کوسٹل ہائی وے پر کراچی اور گوادر کے درمیان اورماڑہ شہر آباد ہے، اس کے ساحلوں کی وسعت اور پہاڑوں کی ہیبت سیاحوں کیلئے کشش رکھتی ہے، یہاں ایئرپورٹ بھی ہے، اورماڑہ کے کئی ساحل مشہور ہیں، ان میں اورماڑہ ہیمر ہیڈ کا ساحل، اورماڑہ ٹرٹل بیچ شامل ہیں، اورماڑہ ہیمر ہیڈ کے ساحل کی خصوصیت یہ ہے کہ یہاں ایک ساتھ صحرا اور ساحل کا نظارہ ہوتا ہے۔

Astola

آستولہ

جزیرہ آستولہ سیاحت اور تفریح کیلئے باقی ساحلوں سے ذرا مشکل ہے، یہاں تفریح کیلئے آنیوالوں کو مچھلی کے شکار، اسکوبہ ڈائیونگ اور کیمپوں میں ٹھہرنے کے بھرپور مواقع میسر ہیں، ایک ذرا سی مشکل یہ ہے کہ یہاں پینے کے پانی کا کوئی انتظام نہیں ہے، آنے والوں کو کھانے پینے کا سامان اپنے ساتھ ہی لانا پڑتا ہے، ستمبر سے مئی تک یہاں مچھیرے ڈیرے ڈالتے ہیں جبکہ جون سے اگست تک سمندر سخت غصے میں ہوتا ہے اور سمندر کی لہریں بہت بلند اور موسم نا سازگار ہوتا ہے۔ یہ ساحل سے دور پاکستان کا سب سے بڑا جزیرہ ہے، یہاں پسنی سے کشتیوں کے ذریعے سے پہنچا جاتا ہے اور یہ فاصلہ 5 گھنٹے کا ہے۔
Pasni

پسنی

پسنی کا چھوٹا سا علاقہ ضلع گوادر میں مکران کی ساحلی پٹی پر واقع ہے، یہ کراچی سے 450 کلومیٹر دور ہے، پسنی کے ساحلوں کی چٹانیں بلوچستان کے دیگر ساحلوں کی نسبت چھوٹی ہیں، پسنی کے ساحل کا نظارہ بھی انتہائی دلفریب ہے، اس علاقے میں بھی ایئرپورٹ موجود ہے۔

Gwadar

گوادر

گوادر پاکستان کا بڑا شہر بننے جارہا ہے، جس سے اس کے ساحلوں کی تیز رفتار ترقی میں مدد ملے گی، گوادر کے ساحلوں پر بلند و بالا چٹانیں، پرندے اور نیلا چمکتا پانی تفریح کیلئے آنیوالوں کا استقبال کرتا ہے، گوادر جیسا کہ ڈیپ سی پورٹ ہے، اسی طرح ساحل بھی ہے، گوادر بحیرہ عرب کے جنوب مغرب میں ہتھوڑی کے سر کی شکل کا جزیرہ نما علاقہ ہے جس کے دونوں طرف خلیج ہیں، جہاں گوادر ڈیپ سی پورٹ تعمیر کی گئی ہے۔ یہاں ایئرپورٹ بھی ہے اور کراچی سے مکران کوسٹل ہائی وے سے بھی یہاں باآسانی پہنچا جاسکتا ہے۔

Pishukan

پشوکان

خلیج گوادر کے مشرق کی طرف پشوکان کا ساحل ہے جہاں پانی کا رنگ ہرا ہے، بلوچستان کی سب سے بہترین مچھلی یہاں ہوتی ہے، اس کا ساحل سیاحوں کیلئے بھرپور کشش رکھتا ہے، اس ساحل پر تیمر کے جنگلات بھی واقع ہیں۔

jiwani

جیوانی

جیوانی کا ساحل ایران کی سرحد سے 34 کلو میٹر کے فاصلے پر ہے، اس علاقے میں نیوی کا اڈہ اور ایئرپورٹ بھی ہے، پشوکان ساحل کی طرح یہاں بھی تیمر کے جنگلات پائے جاتے ہیں جوکہ بین الاقوامی سرحد تک پھیلے ہوئے ہیں، جیوانی کو جنگ عظیم دوم میں اتحادی افواج کی جانب سے فضائی اڈے کے طور پر بھی استعمال کیا گیا، اس ساحل کو یہ اعزاز حاصل ہے کہ ملکہ وکٹوریہ نے یہاں سے سورج غروب ہونے کا منظر دیکھنے کا پروگرام بنایا تھا اور ملکہ کیلئے ساحل پر ہٹ بھی تیار کرلیا گیا تھا وہ آئیں یا نہیں لیکن وہ ہٹ جسے وکٹوریہ ہٹ کہتے ہیں آج بھی موجود ہے۔

WhatsApp FaceBook
تازہ ترین
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube