Wednesday, January 19, 2022  | 15 Jamadilakhir, 1443

سیاسی سوچ

SAMAA | - Posted: Aug 25, 2016 | Last Updated: 5 years ago
SAMAA |
Posted: Aug 25, 2016 | Last Updated: 5 years ago

FSD POOR CHILDRENS PKG  27-01

عوام کیوں غریب ہیں؟ اسکا جواب معاشیات میں نہیں بلکہ سیاست میں چھپا ہے۔ پاکستان میں امیر طبقہ جو شیمپو استعمال کرتا ہے،اس میں موجود پھلوں کی قیمت بھی غریب کی پلیٹ سے زیادہ ہوتی ہے۔ معاشی پالیسی بنانے والے امیر سیاستدان غریبوں کے بارے میں کیا رائے رکھتے ہیں؟ آئیے ایک نظر ڈالتے ہیں۔

پہلی سوچ،غریبوں کو صحت کی بہتر سہولیات کی کیا ضرورت ؟ وہ زیادہ زندہ رہ کر کیا کریں گے؟ میڈٰیا پر کوئی بیمار شخص امداد کیلئے پکارے تو فورا نوٹس لے لواور اس جیسے دوسرے 2 کروڑ مریضوں کو اپنے حال پر رونے دو۔

دوسری سوچ،ہمیں چار نسلوں کا سوچنا ہے۔ غریب عوام کو خوب لوٹوں، ہمیں کوئی قتل تھوڑی کرے گا، تحفظ کیلئے مذہب ہے۔

تیسری سوچ،مدر ٹریسا نے کہا تھاکہ سیکڑوں لوگوں کو نہیں کھلاسکتے تو ایک کو ہی کھلادو۔ اب ایک فیملی کا کررہے ہیں،پھر بھی 19 کروڑغریبوں کو مسئلہ ہے۔

Poor Students On APS Qta Pkg 16-12

چوتھی سوچ،غریبوں کیلئے ہر چیز پر ٹیکس لگادو۔انہی کی وجہ سےافراط زر ہوتا ہے۔ یہ غریب اپنی پوری آمدن خرچ کردیتے ہیں، ہماری طرح سونے یا ڈالر میں سرمایہ کاری نہیں کرتے، کوئی کاروبار نہیں کرتے، تبھی ملک غریب ہے۔

پانچویں سوچ،غریب بڑے چالاک ہوتے ہیں۔کھانے میں روٹی کی جگہ چائے پیتے ہیں اور دنیا کو کہتے ہیں کہ اس سے بھوک نہیں لگتی۔ ہم کیک کا مشورہ دیں تو بدنام کرتے ہیں۔

چھٹی سوچ،غریبوں کا پیسہ لے کر اپنے ناموں پر امیر ملکوں میں جمع کرادو۔ پھر امیرملکوں سے غریب عوام کیلئے امداد مانگو۔ ملک میں ایک دو خیراتی پروگرام شروع کردو۔ یقین جانئے سارے گناہ معاف ہوجاتے ہیں۔

ساتویں سوچ،لوگ سمجھتے ہیں ریاست انہیں پڑھائے، تربیت دے، بچے پالے۔ اب سب ہم کریں تو والدین کی ذمہ داری کیا رہ جائے؟

Poor-children

آٹھویں سوچ،لوگوں میں صبر نام کی چیز نہیں۔ پڑھے لکھے بھی نہیں ورنہ ہر بات پر مظاہرے نہ کرتے، سکون سے انصاف کی امید رکھتے۔ توڑ پھوڑ سے اپنا ہی نقصان کرتے ہیں۔ اغوا ہونے پر مظاہرہ، مقدمہ نہ ہونے پر مظاہرہ، چوری پر مظاہرہ، یہ تو حد ہے۔

نویں سوچ،اپنی حفاظت خود کرو۔اسکولوں میں پڑھنا ہے تودیواریں اونچی کرو، سی سی ٹی وی کیمرے لگاؤ،واک تھرو گیٹ لگاؤ، اساتذہ کو بندوق تھماؤ۔ سیکیورٹی تمہیں دیں تو پھر پالیسی بنانے والوں کی حفاظت کون کرے؟

دسویں سوچ،لوگوں کو امید دلاؤ۔ آج حالات خراب ہیں لیکن آپ کا کل ضرور بہتر ہوگا۔ کل آجائے تو پھر بہترمستقبل کا بولو۔ عوام کو اپنی سیونگ کے علاوہ کچھ یاد نہیں رہتا۔ نہ ہی اس نے تاریخ پڑھی ہوتی ہے ورنہ ایسے حکمرانوں کو ووٹ کیوں دیتی؟

WhatsApp FaceBook
تازہ ترین
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube