Raazia Syed

Author is journalist by profession currently working as a researcher in private channel.

فوڈ فار تھاٹ

جن لوگوں نے کبھی معروف دانشور اشفاق احمد کو سنا ہے ، ان کی محفل میں شرکت کی ہے وہ مکالمے اور سوچ کی تبدیلی کے عمل کی اہمیت سے واقف ہیں ، ہمارے ہاں مسئلہ محض یہی ہے کہ ہم سب تبدیلی تو چاہتے ہیں لیکن اسے قبول نہیں کرنا چاہتے جبکہ تبدیلی کے…

Read More
 

بچپن کو مرنے نہ دیں

بارش کے پانی  میں کاغذ کی کشتی کو چلانا ہو یا گرمیوں کی لمبی دوپہروں میں جب سب گھر والے سوئے ہوئے ہوں چپکے سے پڑوس کے گھروں سے آم ، امردو ، جامن اور لوکاٹ توڑ کر کھانے ہوں یا کسی کے گھر کی گھنٹی بجا کر بھاگنا ہو ہر وقت بچپن کی یادیں…

Read More
 

اپنے پیشے سے محبت کیجئے

آپ سب نے سوشل میڈیا پر میری طرح یہ پوسٹ ضرور دیکھی ہو گی کہ “بیٹا دیکھنا دروازے پر کون ہے”؟ تو بچہ یہ کہتا ہے کہ ’’امی وہاں کوڑے والا آیا ہے ۔” بچے کے اس جواب  کے بعد اسکی والدہ کہتی ہیں کہ “نہیں بیٹا کوڑے والے تو ہم ہیں جو گندگی پھیلاتے…

Read More
 

تشدد کے مبلغ نہ بنیں

ہمارے دوست احباب ہم سے اکثر ناراض رہتے ہیں کہ بارہ پندرہ سال کا صحافتی تجربہ بھی ہمارے معاشی حالات اس طرح نہیں سنوار سکا جس طرح سے سنوارنے چاہیے تھے ، کیونکہ اگر ہم ’’ٹھیک انداز ‘‘ میں کام کرتے تو آج اپنا ایک اخبار یا ٹی وی چینل چلا رہے ہوتے ۔ خیر…

Read More
 

کھیلیں ضرور مگر پارکس میں۔۔۔۔۔

۔۔۔۔۔**  تحریر : راضیہ سید  **۔۔۔۔۔ آج فہیم کا موڈ سخت خراب تھا کیونکہ اسے اب فیس بک پر دسویں مرتبہ ’’کینڈی کرش‘‘ اور’’ پیٹ ریسکیو ساگا‘‘ کی درخواست موصول ہوئی تھی، وہ ایک کامیاب بزنس مین ہے اور اسے کاروباری مصروفیت کی وجہ سے فیس بک اور اسی طرح کے دوسرے سوشل میڈیا سے…

Read More
 

زعفران؛ذائقہ نہیں صحت بھی

لیلی آنٹی بہت پہلے سے ہی میری سہیلی میرب کے محلے میں رہائش پذیر تھیں ۔ وہ ایران سے یہاں آئی تھیں اور ان کے شوہر ایرانی ایمبیسی میں اچھے عہدے پر فائز تھے۔ قابل ذکر یہ تھا کہ  ان کے بنائے ہوئے کھانوں کی بہت کم عرصے میں پورے محلے میں دھوم ہو چکی تھی۔ وہ…

Read More
 

یس باس

معصوم 5 سالہ بچی کی آنکھوں سے آنسو بس چھلکنے کو ہی تھے، دبی دبی سسکیوں سے وہ اپنی روح پر لگنے والے زخم جیسے چھپانا چاہ رہی تھی، ایسا لگتا تھا کہ وہ اپنے جذبات پر قابو پانے کی کوشش تو کر رہی ہے لیکن اس کی کم سنی اس کی معصومیت آشکار کررہی…

Read More
 

ہاتھ سے بنےسوئٹرز،محبت کا انوکھااظہار

موسم سرما کے آتے ہی جہاں سب لوگ اپنے پسندیدہ پہناوؤں اور کھانوں کی بات کرتے ہیں، بے ساختہ مجھے سردیوں کی حسین شامیں اور اس کے ساتھ ہاتھ سے بنے ہوئے سوئیٹرز یاد آجاتے ہیں۔ اس یاد کی ایک خاص وجہ یہ ہے  کہ مارچ اوردسمبر میں ٹیسٹ ہوا کرتے اور ہم نئی کلاسوں میں…

Read More
 

سلیپنگ پلز ، کیا ڈیپریشن کا حتمی علاج ؟

مجھے بطور سائیکاٹرسٹ اپنی پریکٹس کا آغاز کئے ہوئے پندرہ سال ہو چکے ہیں ، اب تک میں نے سیکڑوں ذہنی امراض میں مبتلا مریضوں کا علاج کیا ہے، لیکن آج اس نوجوان لڑکی کے کیس نے مجھے عجیب الجھن میں ڈال دیا تھا ۔ ایک سولہ سترہ سال کی لڑکی جو یقینا ذہنی پسماندگی…

Read More
 

کریلا ہوں ،نیم چڑھا نہیں

اف آج پھر یہ کریلے ، امی آپ بھی ناں ہر روز بس یہ کریلے ہی پکا لیتی ہیں،چلیں پکا بھی لیے ہیں تو آپ اس میں گوشت تو ڈال دیتی ناں ۔ یہ پکار ہے گڈو کی جو گوشت خور ہیں، انہیں ہر دم مٹن کی ڈشز ہی چاہیے ہوتی ہیں ۔امی ان کی…

Read More
 

اونٹنی کا دودھ ،شفا بھی غذا بھی

چند دنوں سے نہ صرف ہمارے محلے کی گلیوں بلکہ کئی مصروف شاہراہوں پرصحرا کا جہاز یعنی اونٹ نظر آرہا تھا ، بچوں اور بڑوں کی ایک بڑی تعداد ان اونٹوں کے گرد دکھائی دیتی اور بڑے شوق سے ان اونٹوں کا دودھ پیا جا رہا تھا ،  کچھ لوگ گھر سے لائے ہوئے برتنوں…

Read More
 

کہانی لکھیں ناں

پرسوں رات شدید سردی تھی لیکن مجھے بادل نخواستہ اپنی دوائی لینے کے لئے باہر جانا تھا ، قصہ مختصر کیمسٹ کی دکان سے دوائی لینے سے پہلے ہی میں ایک معصوم بچے کو ایک کولر میں گرم ابلے ہوئے انڈے فروخت  کرتے ہوئے دیکھ چکی تھی ۔ اس پختون بچے کا رنگ ٹھنڈ کی…

Read More
 

میری آنکھوں سے تم کوئی خواب تو دیکھو

اگر کوئی مجھ سے پوچھے کہ دنیا میں سب سے بڑی نعمت خداوندی کیا ہے تو میں محض یہی کہوں گی کہ بصارت۔ آنکھیں واقعی بڑی نعمت ہیں ذرا دو پل کو سوچیے کہ کیا بنا آنکھوں کے آپ کے ذہن میں قوس و قزح کا تصور آیا؟ رنگوں ، زندگی کی نغمگی ، اورخوب…

Read More
 

چائے میں خلوص بھردیتا ہوں

رمضان صاحب ہمارے دفترکی مشہورومعروف شخصیت ہیں۔ دن میں چارپانچ مرتبہ توان سے ضرور ہی سامنا ہوتا ہے ۔عادت کے بھی بہت اچھے ہیں اور کام تو اور بھی اچھا کرتے ہیں یعنی چائے بناتے ہیں۔ جی ہاں وہ آفس بوائے ہیں اور چائے ایسی مزیدار بناتے ہیں کہ بس دل کرتا ہے کہ سارا…

Read More
 

لٹو؛پنجاب کا روایتی قدیم کھیل

کل میں اپنے بھانجے کے پاس ہی بیٹھی تھی اور وہ موبائل پر گیم کھیل رہا تھا ، میں بہت حیران تھی کہ نجانے یہ کون سا کھیل ہے جس میں گولیاں چلنے کی  آوازیں  بھی آرہی ہیں ۔ میرے استفسار پر موصوف بولے ’’خالہ جانی اس گیم میں دشمن کی ٹیم کو مار دیتے…

Read More
 

کھسے، ایک سدا بہارروایت

تحریر : راضیہ سید عید کے دن قریب تھے اور بازاروں میں خریداری اپنے عروج پر تھی ، ہم سب بچوں کی تیاریاں تقریبا مکمل تھیں صرف جوتے لینے تھے ، ہمارے موڈ سخت خراب تھے کیونکہ ابو کے پاس ہمیں بازار لے جانے کا وقت نہیں تھا ۔ہم روز اپنے بسورتے منہ لے کر…

Read More
 

گرجنگ لازم ہے

یہ کہانی ہے ایک بچے کی ہے جو سٹرک پر بری طرح چلا رہا تھا اور ساتھ ہی اپنی مدد کے لئے لوگوں کو پکار رہا تھا ، گویا معاشرے کے سوئے ہوئے کرداروں کو اپنی بے بسی سے جگانا چاہتا ہو۔ عجیب الجھا ہوا سا وہ معصوم سا بچہ ، خالی نگاہوں سے دیکھتا…

Read More
 

پنکھڑی اک گلاب کی سی

ذکر ہو غزال سی آنکھوں کا تو تصور میں ہونٹ سے گلاب ضرور آتے ہیں، گلاب تمام گلوں کا بادشاہ ہے، سب پھولوں کا شہنشاہ ہے، باغوں کی رونق، شاعری کا لازمی جزو، قدرت کا حسین تحفہ گلاب اپنی مثل آپ ہے کیونکہ کوئی بھی پھول اس کی خوبصورتی اور رعنائی کا مقابلہ نہیں کر…

Read More
 

میک اپ، ظاہری خوبصورتی کا جنون

ایران سعودی عرب کے بعد مشرق وسطیٰ کا دوسرا اور دنیا کا ساتواں بڑا ملک ہے جہاں کاسمیٹکس کی اشیا سے سب سے زیادہ ریونیو حاصل کیا جاتا ہے ۔ انیس سو اسی میں امریکا نے ایران پر تجارتی پابندیاں عائد کی تھیں اسکے بعد سے آج تک ایران میں امریکا کا تیار کردہ میک…

Read More
 

جوکر؛دوسروں کوہنسانےوالے دکھی افراد

شکسپئیر نے کہا تھا کہ دنیا ایک اسٹیج ہے اور یہاں ہر شخص ایک فنکار ہے جو اپنا اپنا کردار ادا کرنے کے بعد اپنی ابدی منزل کی طرف روانہ ہو جاتا ہے۔ لیکن چند کردار ایسے بھی ہوتے ہیں جو آپ کی خوشی کے لئے طرح طرح کے سوانگ بھرتے ہیں ۔ آپ کے…

Read More
 

مزیدارلاہوری قتلمے

میرا بیٹا کافی دن سے مجھ سے پیزا  کھانے کی فرمائش کررہا تھا اور میں اپنی مصروفیات کی وجہ سے اسے ٹالے جا رہی تھی لیکن چھٹی کے دن اور اسکے بگڑے ہوئے موڈ کو دیکھ کر میں نے دیسی پیزا گھر پر ہی بنانے کا تہیہ کر لیا ۔ دیسی پیزا لاہوری قتلمہ ،جو…

Read More
 
 
 
 

مصنفین