Wednesday, May 18, 2022  | 1443  شوّال  16

انارکلی بازار دھماکا: دہشت گرد کی تصویر جاری

SAMAA | - Posted: Jan 25, 2022 | Last Updated: 4 months ago
Posted: Jan 25, 2022 | Last Updated: 4 months ago

انارکلی دھماکے میں مزید پیش رفت سامنے آگئی، قانون نافذ کرنے والے اداروں نے دہشت گرد کی تصویر جاری کردی۔

تفتیشی حکام کے مطابق جائے وقوعہ پر ڈیوائس رکھنے والے دہشت گرد کو ویڈیو میں دیکھا جا سکتا ہے۔ جائے وقوعہ تک ڈیوائس رکھنے والا شخص اکیلا آیا تھا۔

تفتیشی حکام کا یہ بھی کہنا ہے کہ نامعلوم ملزم نے پینٹ شرٹ اور جیکٹ پہن رکھی تھی، دہشت گرد نے طارق انٹرپرائز کے سامنے ایک مشکوک بیگ رکھا۔ بعد ازاں ڈیوائس رکھنے کے بعد ملزم رکشہ پر بیٹھ کر لاری اڈا گیا۔ دہشت گرد کی لاری اڈا تک موومنٹ کیمروں سے ٹریک کی گئی ہے۔

دہشت گرد کو لاری اڈے تک لے جانے والے رکشہ ڈرائیور کو تفتیش کیلئے حراست میں لے لیا گیا ہے، تاہم رکشہ ڈرائیور کا دھماکے میں ملوث ہونے کا کوئی ثبوت نہیں ملا ہے۔

حکام کے مطابق ملزم کی شناخت کی کوششیں جاری ہے، تاہم کوئی گرفتاری عمل میں نہ آسکی۔ حکام کا مزید کہنا ہے کہ دہشت گردوں کا نیٹ ورک بریک کرنے کے لیے تفتیش جاری ہے۔ جائے وقوعہ کے قریب سے حراست میں لیے گئے مزدور بھی رہا کردیئے گئے ہیں۔

واضح رہے لاہور کے علاقے نیو انار کلی بازار کی پان منڈی میں عین اس وقت دھماکا ہوا جب لوگوں کی بڑی تعداد وہاں موجود تھی جس کے نتیجے میں 3 افراد جاں بحق اور 29 افراد زخمی ہوگئے تھے۔

لاہور: انار کلی دھماکے میں اہم پیش رفت سامنے آگئی ہے

وزیراعظم عمران خان نے بھی لاہور دھماکے کا نوٹس لیتے ہوئے ذمہ داران کو فوری گرفتار کرنے کے احکامات جاری کیے تھے جب کہ وزیراعلیٰ عثمان بزدار نے بھی زخمیوں کی عیادت کرتے ہوئے کہا کہ دھماکے کی مکمل تحقیقات کی جارہی ہیں۔

یہاں یہ بات بھی قابل ذکر ہے کہ پولیس اس سے پہلے بھی 3 مشتہ افراد کو گرفتار کرچکی ہے۔ تینوں مشتبہ افراد مزدور تھے، جو جائے وقوعہ کے قریب زیر تعمیر حصے میں کام کر رہے تھے، تینوں افراد کو تفتیش کے بعد رہا کردیا گیا تھا۔ مزدور انارکلی تھانے کے قریب 6 جنوری سے بلڈنگ میں کام کر رہے تھے۔ مذکورہ افراد سردی سے بچنے کے لیے گرم کپڑے خریدنے کے لیے وہاں پر موجود تھے۔

دھماکے کے بعد ڈی آئی جی آپریشنز کی سربراہی میں پولیس نے حساس مقامات پر واقع ،ہوٹلوں،سرائوں اورگیسٹ ہاوسز میں رات کے آخری پہر سے صبح تک چیکنگ کی۔ اس دوران سرچ آپریشن کے دوران ہوٹلز،ہاسٹلز اوربس اڈوں کو بھی چیک کیا گیا،82دوکانیں، 764کرایہ دار اور1064گھروں کی چیکنگ کی گئی،سرچ آپریشن کے دوران 6383افراد کو چیک کیا گیا اور18مشتبہ افراد کو حراست میں لیا گیا۔

علاوہ ازیں انارکلی دھماکے کے بعد لوٹ مار کرنے والے افراد کے خلاف مقدمہ درج کرلیا گیا ہے۔ پولیس کے مطابق انار کلی دھماکے کے بعد لوٹ مار کرنے والے افراد کے خلاف مقدمہ انعامی بانڈز فروخت کرنے والے حافظ عاصم کی مدعیت میں درج کیا گیا۔

ایف آئی آر کے متن میں میں کہا گیا ہے کہ انارکلی میں دھماکے کے بعد بھگڈر مچ گئی، 2 ملازم بھی زخمی ہوئے ،دھماکے کے مقام پر کاؤنٹر کے شیشے ٹوٹنے سے نوٹ زمین پر گر گئے تھے، اس بھگدڑ میں کاؤنٹر اور زمین پرگرے سوا 7 لاکھ کے کرنسی نوٹ لوٹ لیے گئے تھے۔

دوسری جانب انارکلی بازار دھماکے کا مقدمہ تھانہ سی ٹی ڈی میں درج کیا گیا تھا۔ پولیس کے مطابق انار کلی دھماکے کا مقدمہ تھانہ سی ٹی ڈی میں انسپکٹر عابد بیگ کی مدعیت میں درج کیا گیا۔ درج کی گئی ایف آئی آر میں دہشت گردی، ایکسپلوزوایکٹ سمیت 302 اور 324 کی دفعات لگائی گئیں، متن کے مطابق تین دہشت گرد بارودی مواد رکھنے کیلئے موٹر سائیکل پر آئے۔

دہشتگردی کا مزید خطرہ

وزیر داخلہ شیخ رشید کا دھماکے سے متعلق کہنا تھا کہ چار شہروں سے متعلق تھریٹ موجود تھے، پاکستان میں دوبارہ دہشت گردی کی فضا پیدا کی جارہی ہے، امن دشمنوں کے عزائم کامیاب نہیں ہونےدیں گے۔

پنجاب اسمبلی

انارکلی بم دھماکے کی مذمتی قرارداد پنجاب اسمبلی میں جمع کروا دی گئی، مسلم لیگ ن کی رکن پنجاب اسمبلی ربعیہ نصرت کی جانب سے جمع کرائی گئی قرارداد میں کہا گیا ہے کہ پنجاب اسمبلی کا یہ ایوان انارکلی بم دھماکے کی شدید الفاظ میں مذمت کرتا ہے،جاں بحق ہونے والے افراد کے لواحقین سے اظہار تعزیت اور زخمیوں کی جلد صحت یاب کےلیے دعا گو ہیں۔ ملک دشمن عناصر پھر سے سر اٹھانا شروع ہوگئے ہیں۔

نئی دہشت گرد تنظیم

دھماکے کے کچھ دیر بعد ہی سوشل میڈیا پر ایک نئی دہشت گرد تنظیم کی جانب سے نیو انار کلی بازار دھماکے کی ذمہ داری قبول کی گئی۔

لوہاری چوک پر ہونے والے دھماکے کی ذمے داری قبول کرنے والی بلوچ شدت پسند تنظیم، بلوچ نیشنلسٹ آرمی (بی این اے) حال ہی میں وجود میں آئی تھی اور یہ تنظیم کی دوسری کارروائی قرار دی جا رہی ہے۔

اس سے قبل یہتنظیم 19 جنوری کو بلوچستان کے علاقے کوہلو میں سیکیورٹی فورسز کے ایک قافلے کو بھی نشانہ بنانے کا دعویٰ کر چکی ہے جس کی آزادانہ زرائع سے تصدیق نہیں ہوسکی۔

WhatsApp FaceBook
تازہ ترین
 
 
 
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube