Monday, May 16, 2022  | 1443  شوّال  14

کیا بخار اور سردرد کی ادویات مزید مہنگی ہونیوالی ہیں؟

SAMAA | - Posted: Jan 21, 2022 | Last Updated: 4 months ago
SAMAA |
Posted: Jan 21, 2022 | Last Updated: 4 months ago

بخار، سر اور جسم میں درد کیلئے کھائی جانے پیراسٹامول فارمولے کی ادویات مارکیٹ سے غائب ہوگئیں، قیمتوں میں مزید اضافے کا خدشہ ظاہر کیا جارہا ہے۔ پاکستان کیمسٹس اینڈ ڈرگسٹس ایسوسی ایشن کے مطابق عالمی مارکیٹ میں خام مال کی قیمت میں 500 فیصد اضافے کے باعث کمپنیوں نے دوا کی تیار روک دی۔

پیراسیٹامول فارمولے کی ادویات عام طور پر بُخار اور درد کیلئے عام استعمال کی جاتی ہیں، جنہیں شہری معمولی سے بخار اور سر درد کیلئے سیلف میڈیکیشن کے طور پر بڑی تعداد میں استعمال کرتے ہیں۔

میڈیکل اسٹورز اور فارمیسیز پر پیراسیٹامول ڈھونڈنے سے بھی نہیں مل رہی ہے اور جہاں سے یہ دوا میسر آجائے تو اس کے منہ مانگے دام وصول کئے جارہے ہیں۔

اس وقت ہر شہری کا یہی سوال ہے کہ پیراسیٹامول فارمولے کی ادویات مارکیٹ سے کیوں غائب ہیں؟

ایک عام وجہ جو ان ادویات کی قلت کیلئے بتائی جارہی ہے وہ عالمی منڈی میں ان کے خام مال کا مہنگا ہونا ہے، جس کی وجہ سے بخار اور درد کی دوائیں مارکیٹ سے غائب ہیں۔

اس بارے میں پاکستان کیمسٹس اینڈ ڈرگسٹس ایسوسی ایشن سندھ کے چیئرمین غلام ہاشم نورانی نے سماء ڈیجیٹل کو بتایا کہ عالمی مارکیٹ میں خام مال کی قیمت 500 فیصد بڑھ گئی ہیں، جس کی وجہ سے ادویہ ساز کمپنیوں نے اس کی تیاری بند کردی ہے، اس لئے مارکیٹ میں اس فارمولے کی ادویات کی قلت ہوگئی ہے۔

عالمی مارکیٹ میں پیراسیٹامول کا خام مال 900 روپے کلو تھا جو اب 3 ہزار 200 روپے کلو تک پہنچ چکا ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ ڈرگ ریگولیٹری اتھارٹی کی جانب سے انہیں نئی قیمت دے دی گئی ہے اور امکان ہے اب یہ ادویات مارکیٹ میں دستیاب ہوجائیں گی۔

ڈاکٹرز کا کہنا ہے کہ اس وقت کرونا وائرس کی پانچویں لہر کے نتیجے میں شہر میں بخار عام ہے، جس کے نتیجے میں شہریوں کی اکثریت سیلف میڈیکیشن کے طور پر پیناڈول استعمال کرتی ہے۔

خام مال مہنگا ہونے کی وجہ سے پیناڈول بنانے والی دوا ساز کمپنی نے  پیناڈول ایکسٹینڈ متعارف کروائی ہے جو عام پیناڈول کے مقابلے میں مہنگی ہے۔

شہریوں نے شکوہ کیا ہے کہ عام پیناڈول 500 ملی گرام تھی اور نئی پیناڈول ایکسٹینڈ 665 ملی گرام ہے یعنی نئی پیناڈول میں 165 ملی گرام اضافہ ہوا ہے۔

نئی پیناڈول ایکسٹینڈ میں 20 فیصد خام مال زیادہ ہے لیکن قیمت میں اضافہ 300 گنا کیا گیا ہے، جس کے بعد پیناڈول ایکسٹینڈ کی 20 گولیاں 115 روپے میں فروخت کی جارہی ہیں۔

اس سے قبل عام پیناڈول کی 200 گولیوں کا ڈبہ 340 روپے ریٹیل پرائس میں دستیاب تھا، لیکن کرونا وائرس کی موجودہ لہر میں پیراسٹامول فارمولے کی تمام ادویات ہی کی قلت ہوگئی ہے اور انہیں مہنگے داموں فروخت کیا جارہا ہے۔

پاکستان فارماسیوٹیکل ایند مینوفیکچررز ایسوسی ایشن کے وائس چیئرمین عاطف اقبال نے بتایا کہ خام مال مہنگا ہونے کی وجہ سے مہنگی تھیں، ڈرگ ریگولیٹری اتھارٹی پاکستان نئی قیمتیں دے رہی ہے، جس کے بعد مسئلہ حل ہوجائے گا۔

WhatsApp FaceBook
تازہ ترین
 
 
Facebook Twitter Youtube