Monday, May 16, 2022  | 1443  شوّال  14

شہرت کا راز

SAMAA | - Posted: Jan 16, 2022 | Last Updated: 4 months ago
Posted: Jan 16, 2022 | Last Updated: 4 months ago

کی کرنا ایں اوچیاں شاناں نوں

کی ہاتھ لانا اسمانوں نوں

میں ہسدے ہسدے ہے جینا

میں نکل گئی گمانوں تو

جيون کا ارتھ اس کلام ميں بسا ہے اور اسے پيش کرنے والوں نے اس انداز ميں گايا کہ دل کو چھو گيا ۔ جذبات نے آواز کا سہارا لے وہ سر لگائے کہ سننے والے عش عش کر اٹھے ۔ بات ہورہی ہے عابدہ پروين اور نصيبو لال کی ايک ساتھ پہلی جگل بندی کی ۔ موسيقی کے افق پر چمکنے والا درخشاں ستارہ عابدہ پروين اور انکے سامنے تشريف فرما فخر پاکستان نصيبو لال نے جب ۔۔۔ تو جھوم کے سر چھيڑے تو دل جھوم اٹھا ۔ گيت کی ويڈيو کو بے پناہ پسند کيا جارہا ہے ۔ اسے کوک اسٹوڈيو سيزن فورٹين کی بہترين شروعات کہا جارہا ہے ۔ ليکن گيت اور ويڈيو سے بڑھ کر پس پردہ پيش آنے والا منظر شائقين کو متاثر کرگيا ۔ جب عابدہ پروين سيٹ پر تشريف لائيں تو نصيبو لال سے ملاقات کي تو نصيبو لال نے احتراما کھڑے ہو کر استقبال کرنے کي کوشش کي ليکن عابدہ پروين نے انہيں روک ديا اور انکا ہاتھ تھام پر عاجزی سے چوما ۔ نصيبو لال نے حيرانی سے اردگرد موجود لوگوں سے کہا کہ يہ ديکھيں ۔۔

عابدہ پروين کے روکنے کے باوجود نصيبو لال جگہ سے کھڑی ہوئيں ۔۔ کہا مجھے اچھا نہیں لگتا۔ جس پر عابدہ پروين نے کہا  ارے نہیں نہیں، اللہ مجھے معاف کرے۔ نصيبو لال جھک کر  گلے مليں ۔۔ پھر جب عابدہ پروین اپنے سیٹ کی جانب بڑھيں تو  نصیبو لال نے ہاتھ جوڑ کر ان سے گانے کی اجازت مانگی  کہا  ‘اجازت ہے نا میڈیم جی’ اور اس کے بعد کے منظر نے انکساری کے جوہر لٹا ديئے ۔۔ اجازت کيا ديتيں سروں کی ملکہ  نے تو خود جھک کر گانے کي اجازت طلب کی اور پھر  سچے سروں ميں ڈھلی آوازوں اور صوفيانہ کلام کے سحر نے سرور طاری کرديا ۔ ايک انٹرويو ميں نصيبو لال سے اس ملاقات اور گائيکی کے تجربے کا سوال ہوا تو کہا کہ زندگی کا بہترين موقعہ تھا جب عابدہ پروين کا ساتھ ملا ۔ شہرت کے افق پر برجمان عابدہ پروين سے انکساری اور عاجزی کی خوبی کا پوچھا تو جواب ديتے ہوئے انکی آواز بھر آئی ، آنسو چھلک پڑے ۔ کہا بچپن ميں ماں نے سید الشہدا، امام حسین عليہ اسلام کے دروازے کا قيدی بنايا تھا ۔ آج بھی اسی در کے قيدی ہيں۔ اور يہ کہتے کہتے سروں کی ملکہ پھوٹ پھوٹ کر رو پڑيں ۔

کہتے ہيں کہ علم بغيرعمل بے معنی ہے ۔ ان دونوں فنکاروں نے اپنے عمل سے حقيقی محبت کے تصور کے علم کو امر کيا ۔ انکساری اور عاجزی کے بنا کسی بھی فن ميں مہارت ممکن نہيں اس راز سے پردہ اٹھايا ديا۔

WhatsApp FaceBook
تازہ ترین
 
 
 
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube