Wednesday, May 18, 2022  | 1443  شوّال  16

دسمبرمیں سوزوکی آلٹو کی فروخت میں ریکارڈ اضافہ

SAMAA | - Posted: Jan 13, 2022 | Last Updated: 4 months ago
SAMAA |
Posted: Jan 13, 2022 | Last Updated: 4 months ago

دسمبر میں سوزوکی آلٹو گاڑیوں کی فروخت میں ریکارڈ اضافہ دیکھا گیا۔

پاک سوزوکی نے اپنی سوزوکی آلٹو کی اب تک کی سب سے زیادہ ماہانہ گاڑیوں کی فروخت ریکارڈ کی ہے۔

پاکستان آٹو موٹیومینوفیکچررز ایسوسی ایشن (پی اے ایم اے) سے جاری کردہ اعدادوشمار کے مطابق دسمبر 2021 میں سوزوکی آلٹو کے 9 ہزار 195 یونٹس فروخت ہوئے۔

اعداد و شمار کے مطابق  نومبر میں 2 ہزار 420 یونٹس فروخت ہوئے اور دسمبر میں ماہانہ بنیاد پر آلٹو گاڑیوں کی قیمتوں میں اضافے کے باوجود فروخت میں 280 فیصد اضافہ ہوا ہے۔

سوزوکی آلٹو کی فروخت میں اضافہ کیوں ہوا؟

سوزوکی کے ایک کار ڈیلر کا کہنا تھا کہ کمپنی نے نومبر میں کافی تعداد میں گاڑیاں بنائی تاہم وہ صرف 2 ہزار 420 یونٹس فروخت کرسکے کیونکہ انہوں نے نومبر کے وسط میں فیول لائن کے مسائل کی وجہ سے گاڑیوں کی ڈیلیوری روک دی تھی جو دسمبر میں دوبارہ شروع کردی جس سے دسمبر میں گاڑیوں کی فروخت میں اضافہ دیکھا گیا۔

دیگر ماہرین کا خیال ہے کہ بڑھتی ہوئی مانگ کی وجہ سے قیمتوں میں اضافے کا اثر نہیں پڑا کیونکہ آلٹو کی قیمت اب بھی متوسط ​​طبقے کے صارفین کے لیے مناسب ہے۔

ایسوسی ایشن آف پاکستان موٹرسائیکل اسمبلرز (اے پی ایم اے) کے چیئرپرسن محمد صابر شیخ کے مطابق آلٹو کی مانگ روز بروز بڑھ رہی ہے اور کمپنی ماہانہ 25 ہزار گاڑیاں  فروخت کر سکتی ہے لیکن پاکستان میں فیکٹریاں ناکافی ہیں جس کے باعث کمپنی زیادہ گاڑیاں تیار کرنے کی صلاحیت نہیں رکھتی۔

اس کے علاوہ کمپنی 40 فیصد پرزے مقامی طور پر تیار کرتی ہے اور اگر گاڑی خراب ہو جائے تو مالک مناسب قیمت پر پرزے آسانی سے خرید سکتا ہے، انہوں نے مزید کہا کہ گاڑی کی ہیڈلائٹس، بمپر، کار سیٹ، بیک لائٹس اور بیٹریاں پاکستان میں تیار کی جاتی ہیں۔

سوزوکی آلٹو کی قیمت میں اضافہ

سوزوکی کمپنی نے 11 نومبر 2021 کو اپنی سب سے زیادہ فروخت ہونے والی 660 سی سی آلٹو کی قیمت میں ایک لاکھ 83 ہزار روپے تک کا اضافہ کیا تھا، سوزوکی وی ایکس کی قیمت میں ایک لاکھ 61 ہزار روپےاضافے کے بعد قیمت 12 لاکھ 70 ہزار روپے ہوگئی تھی، جبکہ آلٹو وی ایکس آر اور آلٹو وی ایکس ایل کی قیمت بالترتیب ایک لاکھ 73 ہزار روپے اور ایک لاکھ 83 ہزار روپے سے بڑھ کر 15 لاکھ 8 ہزار روپے اور 17 لاکھ روپے تک جا پہنچی۔

اُس وقت تجزیہ کار رضا جعفری کا کہنا تھا کہ صارفین کی ترجیحات اور زیادہ مانگ کی وجہ سے قیمتوں میں اضافہ طویل مدت میں فروخت کے اہداف کو نقصان نہیں پہنچا سکتا تاہم یہ اگلے چند مہینوں میں کاروں کی فروخت کو عارضی طور پر متاثر کر سکتا ہے۔

ایک ڈیلر کے مطابق آلٹو وی ایکس اور وی ایکس آر پر اون منی ایک لاکھ روپے ہے جبکہ آلٹو وی ایکس ایل دولاکھ روپے اون منی پر فروخت ہورہی ہے اور توقع کی جارہی ہے کہ اگر مانگ میں مسلسل اضافہ ہوتا ہے تو اون منی مزید بڑھ سکتی ہے۔

اون منی وہ قیمت ہے جو سرمایہ کار کسی ایسے صارف سے لیتا ہے جو فوری طور پر گاڑی خریدنا چاہتا ہے۔

WhatsApp FaceBook
تازہ ترین
Suzuki Alto, Car Sales, سوزوکی آلٹو، گاڑیوں کی فروخت
 
 
 
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube