Tuesday, May 17, 2022  | 1443  شوّال  15

نوازشریف کی عدم واپسی سےمتعلق خط ماورائے قانون ہے،شہبازشريف

SAMAA | - Posted: Feb 2, 2022 | Last Updated: 3 months ago
SAMAA |
Posted: Feb 2, 2022 | Last Updated: 3 months ago

اپوزیشن لیڈر اور صدر ن لیگ شہبازشریف کا کہنا ہے کہ حلف نامے یا ضمانت کی خلاف ورزی نہیں کی بلکہ سرکار نے خط کے ذریعے کردار کشی کی ہے۔

شہباز شريف نے اٹارنی جنرل کو لکھے گئے جوابی خط میں نوازشریف کی برطانیہ سے عدم واپسی سے متعلق مراسلے کو ماورائے قانون قرار دے دیا۔ شہبازشریف کی طرف  جوابی خط ان کے پرسنل سیکرٹری مراد علی شاہ نے اٹارنی جنرل آفس کوبھیجا ہے۔

 شہباز شریف کے جوابی خط میں کہا گیا ہے کہ وفاقی کابینہ کی ہدایت پر لکھا گیا خط شریف خاندان کے میڈیا ٹرائل کی کوشش ہے کیونکہ نواز شریف کی میڈیکل رپورٹس باقاعدگی سے جمع کروائی جاتی رہی ہیں۔ انہوں نے مزید لکھا کہ اسلام آباد ہائیکورٹ میں زیرسماعت معاملے پر خط لکھ کر توہین عدالت کی گئی ، خط سے تاثر ملا کہ یہ سیاسی مقاصد کيلئے لکھا گیا۔

واضح رہے کہ اٹارنی جنرل نے نوازشریف کے وطن واپس نہ آنے پر انہیں قانونی کارروائی کی دھمکی تھی تاہم شہباز شریف نے جوابی خط میں اٹارنی جنرل کو ہی زیرالتوا مقدمات پر اثرانداز ہونے اور توہین عدالت کا مرتکب ٹھہرا دیا۔

اپوزیشن لیڈر کا کہنا ہے کہ مجھے خط بھجوانا غیرقانونی ، غیرضروری اور ناجائز ہے ، اس کی بنیاد پر میرے خلاف توہین آمیز اور بے بنیاد مہم چلائی گئی ، اپنے حقوق کا تحفظ کرنےاور قانونی کارروائی کا حق رکھتا ہوں۔

WhatsApp FaceBook
تازہ ترین
 
 
 
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube