Monday, May 16, 2022  | 1443  شوّال  14

کراچی: ڈینسو ہال کی ماضی کی چمک دمک لوٹ آئی

SAMAA | - Posted: Nov 17, 2021 | Last Updated: 6 months ago
SAMAA |
Posted: Nov 17, 2021 | Last Updated: 6 months ago

کراچی میں کئی ایسی عمارتيں موجود ہيں جو طرز تعمير ميں اپنی مثال آپ ہیں۔ انہی عمارتوں ميں شامل ڈينسو ہال کی بحالی کا کام مکمل کرليا گيا ہے۔

گوتھک طرز تعمیر کا عمدہ نمونہ، زرد پتھروں کی چنائی سےبنائی جانے والی یہ عمارت جو قدیم کراچی کی خوبصورت پہچان ہے نوآبادیتی دور میں بندرگاہ پر کام کرنے والے افسران کو لائبریری کی سہولت فراہم کرنے کے لیے سن 1886 میں عمارت تعمیر کی گئی۔ اس عمارت کو اس وقت کی سماجی شخصیت ایڈلوجی ڈینسو کے نام سے موسوم کیا گیا۔

قیام پاکستان کے بعد عمارت میں سرکاری دفاتر بنائے گئے اور پھر رفتہ رفتہ اس کا حلیہ بگڑنے لگا۔ قدم ترین علاقے میں تاریخی عمارتوں کی تباہی ہر طرف نظر آتی ہے لیکن چمک دمک ماند پڑجانے کے باوجود ان عمارتوں کی بناوٹ آج بھی دیکھنےوالوں کی اپنی طرف کھینچ لیتی ہے۔

ڈینسو ہال والی گلی کو بھی ٹریفک فری اور ماحول دوست بنا دیا گیا ہے اور یہاں سے کھمبے ختم اور تار زيرزمين ہوگئے جبکہ پوری گلی ميں ٹريفک ختم کرکے پيدل چلنے والوں کے ليے وقف کردیا گیا ہے۔

یاسیمن لاری کا کہنا ہے اس گلی پر ڈیڑھ لاکھ کے قریب دلکش ملکی ٹائلزلگائے گئے ہیں جن پر بنائے گئے عمارتوں کے ماڈلز شہریوں کو ثقافتی ورثےسے محبت کا پیغام بھی دیتے ہیں۔

وقت کے نشیب وفراز سہتی یہ ڈینسو ہال اور اس جیسی دیگر عمارتیں کراچی کے ماتھے کا جھومر ہیں۔ راہ گزر بننے سے اس علاقے کی تاریخی اہمیت بڑھ گئی ہے اور شہریوں میں اپنے ورثے کی حفاظت کا شعور بھی بیدار ہورہا ہے۔
WhatsApp FaceBook
تازہ ترین
 
 
 
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube