Thursday, May 19, 2022  | 1443  شوّال  17

نیب ترمیمی آرڈیننس،افسران نے فراڈ کیسز کو نیب کے دائرےمیں لانے کی سفارش کی تھی

SAMAA | - Posted: Nov 1, 2021 | Last Updated: 7 months ago
SAMAA |
Posted: Nov 1, 2021 | Last Updated: 7 months ago

نیب ترمیمی آرڈیننس نے سماء کی خبر کی تصدیق کردی ہے جس میں 12 اکتوبر کو فراڈ کیسز پر تفتیش کو دوبارہ نیب کے دائرہ اختیار میں لانے کا بتایا گیا تھا۔

سماء کے نمائندہ خصوصی نعیم اشرف بٹ نے بتایا تھا کہ نیب افسران نے فراڈ کیسز کو نیب کے اختیار میں دوبارہ لانے کی سفارش کی تھی۔ نيب افسران نے پرائيويٹ افراد کے فراڈ کی تفتيش روکنے پر تحفظات کا اظہار کیا تھا اور اپنے ڈائریکٹر جنرلز کے ذريعے چيرمين نیب تک تحفظات پہنچانے کی سفارش کی تھی۔

ترمیمی آرڈيننس ميں پرائيويٹ افراد کے خلاف انکوائری نہ کرنے کی شق سے کيسز پر پيش رفت رک گئی تھی۔  نيب دھوکہ دہی کے کيسز کو نئے آرڈيننس سے نکالنے کے ليے حکومت سے سفارش کرے گا۔

نيب کے پاس 800 سے زائد فراڈ کيسز پورے ملک ميں زيرِتفتيش ہيں۔ ڈبل شاہ کيس ميں4ارب روپے سميت درجنوں کيسز ميں اربوں روپے متاثرين کو واپس کيےگئےہيں۔

WhatsApp FaceBook
NAB
تازہ ترین
 
 
 
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube