Tuesday, May 17, 2022  | 1443  شوّال  15

شہری کی عدم بازیابی،پولیس، سیکرٹری داخلہ کوجرمانہ

SAMAA | - Posted: Jul 16, 2020 | Last Updated: 2 years ago
SAMAA |
Posted: Jul 16, 2020 | Last Updated: 2 years ago
[caption id="attachment_1912572" align="alignnone" width="640"] فوٹو: اے ایف پی[/caption]

اسلام آباد سےمغوی شہری کی عدم بازیابی پُروفاقی پولیس سےسیکرٹری داخلہ تک کومہنگی پڑگئی۔اسلام آباد ہائیکورٹ نے 4 حکام کو بیس بیس لاکھ روپے جرمانے کا حکم سنادیا۔جسٹس محسن اختر کیانی نےکہا کہ سیف سٹی کیمروں پر پولیس کو خواتین تو نظر آجاتی ہیں، اغواء ہوتے شہری نظر نہیں آتے۔

شہری اغواء کیس میں اسلام آباد ہائی کورٹ نےوفاقی پولیس کی تفتیش ناقص اورکارکردگی غیر تسلی بخش قراردے دی۔ اسلام آباد ہائیکورٹ نےآئی جی، ایس ایچ او، ایس پی انویسٹی گیشن اور سیکرٹری داخلہ پربیس بیس لاکھ روپے جرمانہ عائد کردیا۔پولیس افسران کیخلاف محکمانہ کارروائی اور آئندہ سماعت پر مغوی کو بازیاب کرکے ہر صورت پیش کرنے کا آرڈر دے دیا۔

دوران سماعت جسٹس محسن اختر کیانی نے پولیس اور سیف سٹی پراجیکٹ پر ریمارکس دئیے اور کہا کہ پراجیکٹ کیمروں پر پولیس کو خواتین تو نظر آجاتی ہیں، ان کی تصاویر واٹس ایپ تک کردی جاتی ہیں لیکن شہر میں اغواء ہوتےلوگ پولیس کو ان کیمروں پر دکھائی نہیں دیتے۔

واضح رہے کہ سلمان فاروقی نامی شہری کےلاپتہ ہونے کا مقدمہ  نومبر 2019 میں تھانہ لوئی بھیر میں درج ہوا تھا۔ بیٹے کی بازیابی کیلئےاسلام آباد ہائیکورٹ سےمغوی کے والد نے رجوع کر رکھا ہے۔

WhatsApp FaceBook
تازہ ترین
 
 
 
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube