Wednesday, May 18, 2022  | 1443  شوّال  16

نیب کےاہم قانون پر20 سال میں ایک باربھی عمل نہ ہوسکا

SAMAA | - Posted: Jul 9, 2020 | Last Updated: 2 years ago
SAMAA |
Posted: Jul 9, 2020 | Last Updated: 2 years ago

نیب کا ایک قانون ایسا بھی ہے جس پر 20 سال سے عمل ہی نہیں ہوسکا۔ اِس قانون میں واضح کہا گیا ہے کہ ہر کرپشن کیس کا فیصلہ 30 دن کے اندر کرنا ہوگا لیکن آج تک ایک بار بھی ایسا ہوا نہ ہی کسی فورم پر اِس کی نشاندہی کی جاتی ہے۔

اکیس سال پہلے جب نیب کا ادارہ بنایا گیا تھا تو ایک قانون اس میں شامل کیا گیا کہ کرپشن کیس بنے گا تو سماعت روزانہ ہو گی اورزیادہ سے زیادہ 30 دن کے اندر فیصلہ سنایا جائے گا،قومی خزانہ لوٹنے کا جرم ثابت ہونے پر سزا ملے گی تاہم 20 سال میں عملی طور پر ایسا ایک بار بھی نہ ہوا۔

نیب آرڈیننس کی سیکشن سولہ اے نے سادہ اور آسان لفظوں میں مدت بتا تو دی لیکن عدالتیں کم اور مقدمات زیادہ ہونے کے باعث بس تاریخ پر تاریخ ڈلتی رہی۔

احتساب بیورو نے کبھی کہیں جاندار آواز اٹھائی ، نہ ہی عدالتوں نےاس قانون کو قابل عمل سمجھا۔روزانہ کی بنیاد پرسابق وزیراعظم نواز شریف کیخلاف کیس کی سماعت ہوئی تب بھی فیصلہ ہونے میں 9 ماہ لگ گئے۔

نیب کی جانب سے بروقت تفتیش مکمل نہ ہونےسےبھی مقدمات لٹکتے رہے۔ضمنی ریفرنس دائرکرنے کےلئے مہینوں مہلت لی جاتی ہے۔

اس وقت اسلام آباد کی 3 احتساب عدالتوں میں اس وقت بھی 100 سے زیادہ نیب ریفرنسز زیرِ سماعت ہیں اور ان میں چھ،چھ سال پرانے ریفرنس بھی شامل ہیں۔ جعلی اکاؤنٹس اسکینڈل میں ایک سال سےفرد جرم عائد نہ ہوسکی۔

WhatsApp FaceBook
NAB
تازہ ترین
 
 
Facebook Twitter Youtube