Tuesday, May 17, 2022  | 1443  شوّال  15

سرکاری افسران کا کارنامہ، زندہ ملازم کو مردہ قرار دیکر لاکھوں روپے ہڑپ گئے

SAMAA | - Posted: May 11, 2019 | Last Updated: 3 years ago
SAMAA |
Posted: May 11, 2019 | Last Updated: 3 years ago

محکمہ تعليم سندھ کے افسران نے زندہ ملازم کو مردہ قرار ديکر 40 لاکھ روپے  ہڑپ لئے۔

محکمہ تعلیم کے افسران نے فراڈ کے پرانے تمام ريکارڈ توڑ ڈالے، ممتاز جاکھرو نامی ٹیچر کو مردہ ظاہر کرکے ان کے جی پی فنڈز اور گریجویٹی کے 40 لاکھ سے زائد رقم کی بندر بانٹ کردی جبکہ ممتاز کی پنشن بھی کسی خاتون کو بیوہ دکھاکر منتقل کرائی گئی۔

متاثرہ شخص نے محکمہ تعلیم اور محکمہ خزانہ کے گٹھ جوڑ کی اطلاع چیئرمین اینٹی کرپشن کو کی تو تفتیش میں کئی انکشافات سامنے آئے۔

تفتیش میں یہ پتا چلا کہ پنشن کیلئے جن بیواؤں کا انتخاب کیا گیا وہ بھی جعلی ہیں جبکہ شناختی کارڈز میں بھی ٹیمپرنگ کرکے ملازمین کی بیوہ ظاہر کیا گیا۔

اینٹی کرپشن نے بدعنوانی میں ملوث محکمہ تعلیم اور خزانہ کے 89 افراد کے خلاف 13 مختلف ایف آئی آر درج کرلیں جبکہ محکمہ تعلیم کے عبدالجبار اور صادق کٹوھڑ کیخلاف 9 مقدمات اور محکمہ خزانہ کے فدا حسین جمالی محمد، علی منگی اور اسد اللہ سومرو کیخلاف 7 ایف آئی آر درج کی گئیں۔

WhatsApp FaceBook
تازہ ترین
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube