Saturday, January 29, 2022  | 25 Jamadilakhir, 1443

سرکاری اراضی اسکینڈل: پرویز خٹک کے خلاف نیب کا شکنجہ سخت

SAMAA | - Posted: Sep 7, 2018 | Last Updated: 3 years ago
SAMAA |
Posted: Sep 7, 2018 | Last Updated: 3 years ago

سابق وزیراعلیٰ خیبر پختونخوا اور موجودہ وزیر دفاع پرویز خٹک کے خلاف قومی احتساب بیورو ( نیب) نے احتساب کا گھیرا مزید تنگ کردیا ہے۔

سماء ٹی وی پشاور کے بیورو چیف طارق آفاق کے مطابق پرویز خٹک کے خلاف مالم جبہ کی سرکاری اراضی کا اسکینڈل انکوائری سے بڑھ کر انویسٹی گیشن کے مرحلے میں داخل ہوچکا ہے، نیب کی جانب سے انویسٹی گیشن مکمل ہونے پر پرویز خٹک کے خلاف احتساب عدالت میں باقاعدہ ریفرنس دائر کیا جائے گا۔

پرویز خٹک پر الزام ہے کہ انہوں نے بطور وزیراعلیٰ اختیارات کا ناجائز استعمال کرتے ہوئے مالم جبہ میں 278 ایکڑ سرکاری اراضی من پسند کمپنی کے نام لیز کردی ہے۔

رواں برس 6 مارچ کو نیب کے ایگزیکٹو بورڈ نے پرویز خٹک، چیف سیکریٹری خیبر پختونخوا خالد پرویز اور دیگر کے خلاف انکوائری کی منظوری دی تھی۔

نیب کے مطابق ملزمان نے بدعنوانی اور اختیارات کا ناجائز استعمال کر تے ہوئے مالم جبہ میں 275 ایکڑ سرکاری جنگلات کی اراضی سیمنز گروپ آف کمپنیز کو لیز پر دی تھی۔

بعد ازاں 25 اپریل کو نیب خیبر پختونخوا نے پرویز خٹک کو اپنے دفتر میں طلب کیا، ان سے ایک گھنٹہ پوچھ گچھ کی اور ایک سوالنامہ ان کے حوالے کردیا۔

اس پیشی کے موقع پر پرویز خٹک سے سرکاری ہیلی کاپٹر کے استعمال سے متعلق بھی انکوائری کی گئی۔

WhatsApp FaceBook
تازہ ترین
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube