Monday, May 16, 2022  | 1443  شوّال  15

بلوچستان میں سیاسی بےیقینی؛بیوروکریسی بھی زدمیں آگئی

SAMAA | - Posted: Jan 8, 2018 | Last Updated: 4 years ago
SAMAA |
Posted: Jan 8, 2018 | Last Updated: 4 years ago

کوئٹہ: بلوچستان کی سیاسی رسہ کشی کی زد میں بیورو کریسی بھی آگئی۔ منحرف وزراء اورارکان اسمبلی کے حلقوں کے ڈپٹی کمشنراورضلعی پولیس سربراہان تبدیل کردیے گئے۔

دو جنوری کو وزیراعلیٰ بلوچستان نواب ثناء اللہ زہری کے خلاف عدم اعتماد کی تحریک جمع کرائے جانے کے بعد سے بلوچستان میں ایک طرف سیاسی بے یقینی کی صورتحال ہے تو دوسری طرف بیورو کریسی بھی بے چینی کا شکار ہوگئی ہے۔

بلوچستان میں جاری سیاسی بحران کی زد میں سرکاری افسران بھی آگئے۔ منحرف وزراء اورارکان اسمبلی کے ضلعوں سے تعلق رکھنے والے تیس سے زائد سرکاری افسران کا تبادلہ کردیا گیا۔

نوٹیفکیشنزکے مطابق دوجنوری سے اب تک ڈیرہ بگٹی،چاغی،آواران ،سبی اورجعفرآباد کے ڈپٹی کمشنرز اوراسسٹنٹ کمشنرز تبدیل کئے جاچکے ہیں۔ سبی ڈویژن کے کمشنر شہریار تاج کو بھی عہدے سے ہٹادیا گیا۔ سرفرازبگٹی،عبدالقدوس بزنجو اور جان جمالی کے اضلاع ڈیرہ بگٹی ،آواران اور جعفرآباد کے ضلعی پولیس سربراہان بھی عہدے سے ہٹادیے گئے جنہوں نے چند ماہ قبل ہی عہدے سنبھالے تھے۔

ناقدین کے مطابق بلوچستان میں وزراء اور مشیران کی طرح ضلعوں کے انتظامی اور پولیس سربراہان بھی سیاسی سفارش اور پسند و ناپسند کی بنیاد پرلگائے جاتے ہیں۔ سماء

WhatsApp FaceBook
تازہ ترین
 
 
 
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube