Thursday, May 19, 2022  | 1443  شوّال  17

بھارت افغانستان میں ریاستی دہشت گردی کو فروغ دے رہا ہے،دفتر خارجہ

SAMAA | - Posted: Jun 8, 2017 | Last Updated: 5 years ago
SAMAA |
Posted: Jun 8, 2017 | Last Updated: 5 years ago

nafees-zakaria

اسلام آباد: پاکستان نے کہا ہے کہ پاک۔افغان تعلقات کو سبوتاژ کرنے کیلئے بھارت افغانستان میں ریاستی دہشت گردی کو فروغ دے رہا ہے، دہشت گردی کی لعنت کے خاتمہ کیلئے پاکستان اور افغانستان کو قریبی روابط کو فروغ دینا چاہئے، شنگھائی تعاون تنظیم کے دو روزہ اجلاس میں پاکستان تنظیم کا مکمل رکن بن جائے گا، پاکستان کو مشرق وسطیٰ کی موجودہ صورتحال پر گہری تشویش ہے، اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل اور انسانی حقوق کی تنظیمیں مقبوضہ کشمیر میں بھارتی فوج کی جانب سے انسانی حقوق کی پامالیوں کا نوٹس لیں۔

دفتر خارجہ کے ترجمان نفیس زکریا نے جمعرات کو ہفتہ وار بریفنگ دیتے ہوئے کہا کہ افغانستان گذشتہ 40 برسوں سے بحران اور خانہ جنگی کا شکار ہے اور اس صورتحال کی وجہ سے دہشت گردوں کو وہاں پر قیام کی جگہ ملی، دہشت گردی کی وجہ سے افغانستان کے عوام کو بہت سی مشکلات کا سامنا کرنا پڑا ہے، اسی طرح پاکستان کے عوام کو بھی دہشت گردی سے بہت تکلیف اٹھانا پڑی۔

ترجمان نے کہا کہ عدم استحکام کا شکار افغانستان سب سے زیادہ پاکستان کو متاثر کرے گا، پاکستان افغانوں کی قیادت اور سرپرستی میں امن عمل کی حمایت کرتا ہے، افغانستان میں قیام امن کیلئے جاری عمل خوش آئند ہے۔ قزاقستان کے دارالحکومت آستانہ میں شنگھائی تعاون تنظیم کے دو روزہ اجلاس کے حوالہ سوال پر ترجمان نے کہا کہ اس سربراہ اجلاس میں پاکستان تنظیم کا مکمل رکن بن جائے گا۔

انہوں نے کہا کہ تنظیم کے تمام رکن ممالک کو علاقائی سلامتی اور علاقائی مسائل کے پرامن حل کے ضمن میں اپنا کلیدی کردار ادا کرنا چاہئے، وزیراعظم پاکستان محمد نواز شریف اس تاریخی موقع پر آستانہ میں موجود ہیں۔ قطر اور دیگر خلیجی ریاستوں سے تعلقات کے سوال پر ترجمان نے کہا کہ پاکستان مسلمان ممالک کے درمیان اتفاق و اتحاد پر یقین رکھتا ہے، مسلم دنیا کے اختلافات کے خاتمہ کیلئے پاکستان نے پہلے سے ہی سنجیدہ کوششیں کی ہیں، پاکستان کو مشرق وسطیٰ کی موجودہ صورتحال پر گہری تشویش ہے۔

ترجمان نے کہا کہ کنٹرول لائن اور ورکنگ باﺅنڈری پر بھارتی قابض فورسز کی جانب سے اندھا دھند بلااشتعال فائرنگ کا سلسلہ جاری ہے، بھارت پاکستان کے ساتھ تصادم چاہتا ہے، گذشتہ ایک ہفتہ میں 12 ویں جماعت کے طالب علم عادل فاروق سمیت 9 نہتے کشمیریوں کو بھارتی قابض فوج نے شہید کیا ہے۔ شہداء میں پوسٹ گریجویٹ طالب علم اعجاز احمد میر اور 19 سالہ احمد شیخ بھی شامل ہیں۔ بھارتی فورسز کی کارروائیوں میں متعدد کشمیری زخمی ہو گئے ہیں جن میں سے بعض کو چھرے دار بندوقوں سے نشانہ بنایا گیا، اس عرصہ میں 40 سے زائد کشمیریوں کو گرفتار کیا گیا۔

ترجمان نے کہا کہ پاکستان مقبوضہ کشمیر میں بھارتی فورسز کی جانب سے انسانی حقوق کی سنگین پامالیوں کی مذمت کرتا ہے، سیّد علی گیلانی، میر واعظ عمر فاروق، محمد یاسین ملک اور دیگر کشمیری رہنماﺅں کی کال پر مقبوضہ کشمیر کے عوام جمعہ کو پوری مقبوضہ ریاست میں پرامن احتجاج کریں گے۔

ترجمان نے کہا کہ بھاری تعداد میں فوجیوں کی تعیناتی اور انسانی حقوق کی سنگین پامالیوں و ظلم و تشدد سے نہتے کشمیریوں کے عزم کو دبایا نہیں جا سکتا، پاکستان کی حکومت اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل اور انسانی حقوق کی تنظیموں سے یہ اپیل کرتی ہے کہ وہ مقبوضہ کشمیر میں بھارتی فوج کی جانب سے انسانی حقوق کی پامالیوں کا نوٹس لے۔

ترجمان نے مزید کہا کہ گذشتہ جنیوا میں کونسل آف ہیومن رائٹس کے 35 ویں سیشن میں پاکستان نے مقبوضہ کشمیر میں بھارتی فوج کی جانب سے انسانی حقوق کی پامالیوں کا معاملہ اٹھایا ہے۔ اے پی پی

WhatsApp FaceBook
تازہ ترین
 
 
 
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube