Tuesday, May 17, 2022  | 1443  شوّال  15

وزیراعظم،وزراکیخلاف مقدمہ،حکومت نےعدالت سےریلیف مانگ لیا

SAMAA | - Posted: Sep 23, 2014 | Last Updated: 8 years ago
SAMAA |
Posted: Sep 23, 2014 | Last Updated: 8 years ago

اسٹاف رپورٹ

اسلام آباد :  وزیراعظم، وزیراعلیٰ پنجاب سمیت گیارہ اعلیٰ شخصیات کے خلاف پی اے ٹی کے کارکنوں کے قتل کے مقدمے پر حکومت نے سپریم کورٹ آف پاکستان سے ریلیف مانگ لیا، حکومت نے باقاعدہ سپریم کورٹ سے اپیل کرتے ہوئے تحریری بیان بھی داخل کردیا۔

حکومت کی جانب سے اٹارنی جنرل آف پاکستان نے سپریم کورٹ میں تحریری بیان داخل کرایا، تحریری بیان میں حکومت کی جانب سے مؤقف اختیار کیا گیا کہ ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن جج کی جانب سے وزیراعظم، وزیراعلیٰ پنجاب اور دیگر اہم شخصیات کے خلاف شاہراہ دستور پر قتل کے مقدمے کے اندراج کا عدالتی حکم غیر قانونی ہے۔

جواب میں کہا گیا ہے کہ سیشن جج نے لاء آفسیر کے دلائل کو نظر انداز کیا، سیاسی انتظامیہ کے خلاف ایف آئی آر درج کرنے کا حکم انصافی ہے، امن و امان کو برقرار رکھنا انتظامیہ کی ذمہ داری ہے۔ انتظامیہ نے ہر ممکن حد تک تحمل کا مظاہرہ کیا لیکن دھرنے والوں نے وزیر اعظم، پارلیمنٹ اور پی ٹی وی کی باڑ توڑ کر قانون کی خلاف ورزی کی۔

تحریری بیان میں مزید کہا گیا ہے کہ مظاہرے میں شریک دونوں افراد قریب سے گولی لگنے سے جاں بحق ہوئے، پولیس کے پاس کوئی اسلحہ یا آتش گیر مواد نہیں تھا، یہ دونوں افراد مظاہرین کی اپنی فائرنگ سے جاں بحق ہوئے۔

تحریری جواب میں کہا گیا ہے کہ دفعہ 144 کے نفاذ کے خلاف ورزی پر پولیس نے لوگوں کو پکڑا مگر اسلام آباد ہائی کورٹ نے تمام گرفتار افراد کو رہا کر دیا، جواب میں سپریم کورٹ سے ریلیف کی استدعا کی گئی ہے۔ سماء

WhatsApp FaceBook
تازہ ترین
 
 
 
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube