Monday, May 16, 2022  | 1443  شوّال  14

آئی جی ایف سی توہین عدالت کیس،چیف جسٹس،عرفان قادرمیں تلخ جملوں کاتبادلہ

SAMAA | - Posted: Dec 11, 2013 | Last Updated: 8 years ago
SAMAA |
Posted: Dec 11, 2013 | Last Updated: 8 years ago

ویب ڈیسک:
اسلام آباد : سپریم کورٹ آف پاکستان میں بلوچستان بدامنی اور آئی جی ایف سی توہین عدالت کیس کی سماعت شروع ہوگئی۔ قائم مقام ڈی جی ایف سی بریگیڈئر خالد بلوچستان بدامنی کیس میں پیش ہونے کیلئے عدالت پہنچ گئے ہیں۔

آئی جی ایف سی توہین عدالت کیس کی سماعت کے آغاز میں آئی جی ایف سی کے وکیل اور چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری کے درمیان سخت جملوں کا تبادلہ ہوا۔ آئی جی ایف سی کے وکیل اور سابق اٹارنی جنرل آف پاکستان عرفان قادر نے عدالتی بینچ کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ مجھے کچھ بولنے کا موقع دیا جائے، جس پر چیف جسٹس آف پاکستان نے ریمارکس دیئے کہ جب تک آئی جی ایف سی پیش نہ ہوں، آپ کچھ نہیں بول سکتے۔

اس پر ایف سی  کے وکیل عرفان قادر نے عدالت سے جرح کرتے ہوئے کہا کہ اخبار میں ہے آج جوڈیشل ستارا غروب، اور سیاسی ستارا ابھر رہا ہے، قانونی ذمہ داری ہے آپ اخبارات کو ایسی خبریں چھاپنے سے روکیں، میں ، اپنے مؤکل کو کسی سیاسی سپر اسٹار کے سامنے پیش نہیں کرسکتا۔

جس پر چیف جسٹس آف پاکستان نے ہرہمی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ عدالت کا احترام کریں، اونچی آواز میں بات مت کریں، آپ کا لائسنس منسوخ بھی کر سکتے ہیں، جس پر عرفان قادر نے ڈھٹائی سے کہا کہ آپ بے شک میرا لائسنس منسوخ کردیں۔ چیف جسٹس نے ریمارکس دئیے کہ آپ اپنے خلاف سخت اقدام لینے پر مجبور نہ کریں۔ عدالت عظمیٰ  کے بار بار کہنے پر بھی عرفان قادر خاموش نہیں ہوئے۔ کیس کی سماعت جاری ہے۔ سماء

WhatsApp FaceBook
تازہ ترین
 
 
 
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube