Thursday, May 19, 2022  | 1443  شوّال  17

سندھ میں طوفانی بارشیں،8 جاں بحق،آبادیاں،فصلیں تباہ

SAMAA | - Posted: Sep 2, 2011 | Last Updated: 11 years ago
SAMAA |
Posted: Sep 2, 2011 | Last Updated: 11 years ago

اسٹاف رپورٹ
کراچی: سندھ اور بلوچستان میں موسلا دھار بارش نے تباہی مچا دی ہے۔  مختلف حادثات میں 8 افراد جاں بحق اور 24 زخمی ہوگئے۔ حب ڈیم میں پانی کی سطح تیزی سے  بلند ہو رہی ہے۔ محکمہ موسمیات نے سندھ میں مون سون بارشوں کا حالیہ سلسلہ 7 ستمبر تک جاری رہنے کی پیشگوئی کی ہے۔

سندھ کے مختلف علاقوں میں بارشوں سے ہونے والی تباہی کا دائرہ بڑھتا ہی چلا جارہا ہے۔ میرپور خاص، حیدرآباد اور بدین کے اضلاع میں درجنوں دیہات زیر آب آگئے ہیں۔

گھروں کی چھتیں و دیواریں گرنے اور کرنٹ لگنے سے ہلاکتوں کی تعداد میں بھی اضافہ ہورہا ہے، جبکہ اس قدرتی آفت سے بے گھر ہونے والوں کی تعداد بھی بڑھتی چلی جارہی ہے۔

وزیر اعظم نے نیشنل ڈیزاسٹر اتھارٹی کو سندھ میں بارش سے بے گھر ہونے والے متاثرین کو خیمے اور دیگر ضروریات زندگی فراہم کرنے کی ہدایت کی ہے۔

حیدرآبا د کی حالت بھی مختلف نہیں ہے۔ تین دن سے جاری بارشوں سے لیاقت کالونی، گرونگر،امریکن کوارٹرز اور دیگر نشیبی علاقے زیرآب آگئے ہیں۔ موسلا دھار بارش کے باعث لوگوں کی بڑی تعداد نماز عید کی ادائیگی سے بھی محروم رہ گئے۔

شہر کےمختلف علاقوں میں بجلی کا طویل بریک ڈاون بھی جاری ہے۔ محکمہ موسمیات نے بارشوں کا سلسلہ مزید یک ہفتے تک جاری رہنے کی پیشگوئی کی ہے۔

لطیف آباد کے علاقے میں پینتیس سالہ شخص اور ٹنڈو محمد خان میں خاتون کرنٹ لگنے سے جاں بحق ہوگئیں۔ گھوٹکی اور گرد و نواح میں بھی موسلا دھار بارشوں کا سلسلہ جاری ہے۔

بارش کے سبب گاؤں کریم بخش میں مکان کی چھت گرنے اور مختلف واقعات میں دو خواتین سمیت 5 افراد جاں بحق اور 10 افراد زخمی ہوگئے۔

بدین کے علاقے ترائی میں چھت گرنے سے 5 سالہ بچہ جاں بحق اور 5 افراد زخمی ہوگئے۔ بلوچستان میں بھی موسلا دھار بارشوں نے شدید تباہی مچا دی ہے۔ جہاں لیبر کالونی میں کرنٹ لگنے سے ایک شخص جاں بحق ہوگیا۔

خضدار میں ممکنہ سیلاب کے پیش نظر متعلقہ اداروں میں ہنگامی حالت نافذ کردی گئی۔ جب کہ حب ڈیم میں بھی تیزی سے پانی کی سطح بلند ہو رہی ہے۔ سماء

WhatsApp FaceBook
تازہ ترین
 
 
 
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube