چھ ملکی اسپیکرزکانفرنس؛صدر،اسپیکراسمبلی ،چیئرمین سینیٹ کا اہم خطاب

اسلام آباد:وفاقی دارالحکومت میں ’’ دہشتگردی اور بین العلاقائی رابطے‘‘ کے عنوان سے پہلی چھ ملکی اسپیکرزکانفرنس کےشرکاء سے خطاب میں صدرپاکستان نے کہا کانفرنس خطے کو درپیش چیلنجزسے نمٹنے میں مفید ثابت ہوگی ۔اسپيکراياز صادق نے کہا کہ نان اسٹيٹ ايکٹرزنےسرحدي تحفظ کو دھچکا پہنچايا۔ چيني نمائندے نےکہاکہ تنازعات کے حل کيلئے ڈائيلاگ پريقين رکھتے ہيں۔

کانفرنس میں افغانستان، ترکی، ایران، روس، چین اور پاکستان کے اسپیکرز کے علاوہ پاکستان سےچئیرمین سینیٹ رضا ربانی بھی شریک ہیں۔

افتتاحی سیشن سے اپنے خطاب میں اسپیکر قومی اسمبلی سردار ایازصادق نے کہا کہ عالمی تنظیم فلسطین اور کشمیر کا مسئلہ حل کرنے میں ناکام رہی ۔ یہ چھ ملک مل کر بہت کچھ بدل سکتے ہیں ۔پارلیمانی ڈپلومیسی سے چینلنجز کا بہتر اندازمیں مقابلہ کیا جا سکتا ہے اختلافات کے باعث ترقی نہیں رکنی چاہیئے، ضرورت ہے کہ ایک دوسرے کی مدد اور دوستی کیلئے ہاتھ تھام لیا جائے۔

ایازصادق نے کہا کہ دس سال کے دوران دنیا کے ہرخطے میں دہشتگرد حملے ہوئے، 2 لاکھ جانیں ضائع ہوئیں جبکہ پاکستان کو اب تک 120 ارب ڈالرز کا مالی نقصان پہنچ چکا ہے۔ یہی وجوہات ہیں کہ ہم سب کو ایک دوسرے کا ہاتھ تھامنا چاہیے،ہمیں ادراک کرنا ہوگا باہمي اختلافات سے ترقي کا عمل نہيں رکنا چاہئے۔ کانفرنس میں شریک ممالک دہشت گردی کو ہر شکل میں مسترد کرتے ہیں۔

صدر مملکت ممنون حسین نے اپنے خطاب میں کہا کہ دہشتگردی مقامی مسئلہ نہیں بیرونی مداخلت ہے جس سے پاکستان سب سے زیادہ متاثرہواہے ۔ نائن الیون کے بعد پاکستان کو دہشتگردی کے دلدل میں دھکیل دیا گیا۔ہماری جغرافیائی قربت تاریخ کا دھارا بدلنے کی صلاحیت رکھتی ہے۔ سی پیک کےفعال ہونے میں زیادہ دیرنہیں رہی، اس سے خطے میں نئے معاشی دور کا آغاز ہوگا۔ صدر نے خطے کے تمام ملکوں کو چین پاکستان اقتصادی راہداری کے اہم منصوبے میں شامل ہونے کی دعوت دی۔

انہوں نے کہا کہ پاکستان نےپرامن بقائے باہمی کے جذبے کے تحت افغانستان میں امن و استحکام کے لئے محنت اورغیر مشروط تعاون کیا ہے۔خطے میں پائیدار امن و استحکام کے لئے مسئلہ کشمیر کا حل ناگزیر ہے۔

ایرانی اسپیکرعلی لاریجانی نے اپنے خطاب میں کہا کہ آج کے دورمیں دہشت گردی کی بنیاد بہت مختلف ہے ، انٹیلی جنس شیئرنگ بہتر بنانا ہوگی ۔ ہمیں امریکا کی نئی مہم جوئی روکنے کی ضرورت ہے جبکہ سائبر دہشتگردی روکنے کیلئے بھی ٹھوس اقدامات کی ضرورت ہے۔ تین دہائیوں سے دہشتگردی کیخلاف لڑ رہے ہیں لیکن آج کل کے دور میں اس کی بنیاد بہت مختلف ہے۔

روس کی اسمبلی ڈوما کے چیئرمین نے کہا کہ ہم اجتماعی کوششوں سے دہشت گردی کو شکست دے سکتے ہیں، یہ پوری دنیا اور تمام مذاہب کے لیے خطرہ ہے۔ انہوں نے دہشت گردی کے لئے مالی وسائل کو روکنے اور قانون سازی کے اقدامات کو مضبوط کرنے پر زور دیا۔روسی اسپیکر نے مزید کہا کہ دہشتگردی روکنے میں روس کو تجربہ حاصل ہے اور یہ ہمارا مشترکہ مقصد بھی ہے۔

چین کی قومی عوامی کانگریس کی قائمہ کمیٹی کے نائب چیئرمین نے کہاکہ کوئی ملک تنہا انسانیت کو در پیش مسائل سے عہدہ برآں نہیں ہوسکتا اس لئے ہم سب کو اس سلسلے میں مل کر کام کرنا ہوگا۔ہمیں اجتماعی کوششوں کے ذریعے امن واستحکام قائم کرنے کا عزم کرنا چاہیے۔

ترک اسپیکر نے اپنے خطاب میں کہا کہ خطےکوسنگین چیلنجزدرپیش ہیں۔

CHINA

MAMNOON HUSSAIN

AYAZ SADIQ

RAZA RABBANI

Dr. Ali Ardeshir Larijani

Russian Federation

Six-nation Speakers' Conference

Speakers Conference

Vyacheslav V. Volodin

Zhang Ping

Tabool ads will show in this div