پشاورآرمی پبلک اسکول پردہشتگردوں کاحملہ،132بچوں سمیت141افرادشہید،متعددزخمی

ویب ایڈیٹر :

 

پشاور :  ورسک روڈ پر واقع آرمی پبلک اسکول  پر دہشت گردوں کے حملے میں شہید افراد کی تعداد 141  تک جا پہنچی ہے، شہید ہونے والوں میں132  بچے، سیکیورٹی اہل کار اور  خاتون ٹیچرز شامل ہیں۔ جب کہ خود کش حملے اور فائرنگ سے  بڑی تعداد میں اساتذہ اور طلبا  زخمی ہوئے۔

 

عسکری ذرائع اور پولیس کے مطابق منگل کی صبح پشاور کے ورسک روڈ پر واقع آرمی پبلک اسکول میں دہشت گرد سیکیورٹی فورسز کی وردی میں اسکول کے اندر داخل ہوگئے اور فائرنگ شروع کردی، فائرنگ اور خود کش حملے کی  زد میں آکر 132 بچے  جاں بحق ہوگئے، فائرنگ سے اساتذہ اور طلباء سمیت متعدد افراد زخمی ہیں۔

 

ذرائع کے مطابق اسکول کے اندر سے وقفے وقفے  سے فائرنگ کی آوازیں آ تی رہیں، تاہم سیکیورٹی فورسز کے دستے بروقت موقع  پر پہنچ گئے اور اسکول کے تین  حصوں کو خالی کراکے زخمیوں اور لاشوں کو اسپتال منتقل کیا۔دہشت گردوں نےاسکول کےعملے کویرغمال بنانے کی بھی اطلاعات تھیں۔ ذرائع کے مطابق متعدد خاتون  ٹیچرز کو بچوں کے ساتھ زندہ جلایا گیا اور بچوں کو مجبور کیا گیا کہ وہ اپنے اساتذہ کو زندہ جلتا دیکھیں۔ بچوں نے باتھ روم، روشن دانوں اور فرنیچر کے نیچے گھس کر اپنی جانیں بچائیں۔

 

بعد ازاں سیکیورٹی فورسز کے ایلئیٹ کمانڈوز بھی اسکول کے باہر  پہنچ گئے ، جس کے بعد دہشت گردوں اور فورسز کے درمیان فائرنگ کا تبادلہ  بھی ہوا، دہشت گردوں کی جانب سے اسکول کے اندر خود کش حملہ بھی کیا گیا۔ اسکول اور   کالج کے اطراف پر ہیلی کاپٹر کی نچلی پرواز  یں کیں، جب کہ فورسز کی اے پی سی بھی موقع پر پہنچ گئی ، علاقے کو مکمل طور پر سیل کردیا گیا ، سیکیورٹی فورسز نے علاقے کو گھیرے میں لے لیا۔  حملے کی اطلاع ملتے ہی پریشان والدین کی بڑی تعداد موقع پر پہنچ گئے۔

 

لاشوں اور  زخمیوں کو سی ایم ایچ اور لیڈی ریڈنگ اسپتال منتقل کیاگیا  ہے، اسپتال ذرائع کے مطابق حملے میں شہید ہونے والوں کی تعداد 132 تک جا پہنچی ہے، جس میں 141 بچے شامل ہیں۔ جب کہ ایک لیڈی ٹیچر اور ایک سیکیورٹی اہل کار بھی شامل ہے۔ سماء

میں

زخمی

کا

پر

مسلح

سمیت

اسکول

دہشتگردوں

پبلک

پشاور،آرمی

شہید،متعدد

Tabool ads will show in this div