ذرا سی لاپرواہی اور بڑا نقصان

Nov 29, 2017

****تحریر: عدیل طیب****

مجھے یاد ہے آج بھی طالب علمی کا وہ زمانہ جب روزانہ ایک گھنٹے کا سفر طے کرکے بس کے ذریعے درسگاہ پہنچتا۔ کیونکہ بس ایک سستی سواری تھی اس لئے یہ سہولت کسی نعمت سے کم نہ تھی۔ بس کی سواری اس وقت دلچسپ صورتحال اختیار کرجاتی تھی جب اس راستے سے گزرنے والی اسی نمبر کی دوسری بس آجاتی تھی اور پھر دونوں بسوں کے درمیان مقابلہ شروع ہوجاتا تھا۔ ایک ڈرائیور دوسرے ڈرائیور کو پیچھے چھوڑنے کےلئے تیز رفتاری سے بس کو دوڑاتا اور یہ سلسلہ بس کے آخری اسٹاپ تک چلتا رہتا۔ اس صورتحال میں بس میں بیٹھے مسافر اس بات پر تو خوش ہوتے کہ آج اپنی منزل پر بروقت پہنچ جائیں گے لیکن ساتھ ہی یہ ڈر لگا رہتا کہ کہیں کوئی حادثہ ہی رونما نہ ہوجائے۔

کچھ دن قبل بسوں کی تیز رفتاری کے باعث ہی کراچی کی ایم اے جناح روڈ پر ایک دردناک واقعہ پیش آیا جس میں گھر سے اسکول جانی والی ننھی بچی بس کی ٹکر لگنے سے موقع پر جاں بحق ہوگئی جب کہ موٹرسائیکل پر سوار بچی کا والد شدید زخمی ہوگیا. واقعہ اس قدر دردناک تھا کہ عوام مشتعل ہوگئے اور حادثے کی وجہ بننے والی دو بسوں کو جلا ڈالا جو جل کر خاکستر ہوگئیں. خوش قسمتی سے دونوں بسوں کے ڈرائیور اور کنڈیکٹر موقع سے فرار ہونے میں کامیاب ہوگئے جن کو بعد میں پولیس نے گرفتار کر کے عدالت میں پیش کیا. ملزم نے غلطی کا اعتراف کرتے ہوئے اپنا جرم قبول کر لیا. ملزم نے میڈیا کو بتایا کہ پیچھے سے آنے والی بس مجھ سے آگے نکل گئی تھی اس لئے دوبارہ آگے نکلنے کے لئے میں نے بس بھگانا شروع کردی اور یہ حادثہ پیش آگیا۔ دوران سفر یہ بات معلوم ہونی چاہئے کہ کوئی بھی شخص حادثہ جان بوجھ کر نہیں کرتا البتہ اس میں غلطی اور لاپرواہی ضرور ہوسکتی ہے اور اس حادثے میں بھی کچھ ایسا ہی ہوا. بس ڈرائیور نے قطعی یہ نہیں سوچا ہوگا کہ اس کا کئی سال کا تجربہ کسی کو موت کی وادی میں پہنچا دے گا لیکن پھر بھی ایسا ہوا اور ایسا اس لئے ہوا کیونکہ بس ڈرائیور لاپرواہی اور چھوٹی سے غلطی کر گیا. ڈرائیور کی لاپرواہی یا غلطی اس کا تیز رفتاری میں بس چلاتے ہوئے اوور ٹیک کرنا تھا جس کے باعث موٹرسائیکل والا زد میں آگیا۔

کراچی میں تقریباً روزانہ ہی ٹریفک کے چھوٹے بڑے حادثات ہوتے ہیں جس کی مختلف وجوہات میں سے اہم وجہ سواری کو تیز رفتاری سے چلانا ہے. صرف یہی نہیں بلکہ تیز رفتاری کے ساتھ خطرناک طریقے کی اوور ٹیکنگ کرنا بھی ہے. یہ ذرا سی لاپرواہی کبھی کبھی بڑے حادثے کروا دیتی ہے اور انسان منہ دیکھانے کے قابل بھی نہیں رہتا. اس لئے جب بھی سواری کا استعمال کریں تو احتیاط کریں اور ٹریفک قوانین پر سختی سے عمل کریں ورنہ کسی دن آپ کو بھی مجرم بننے میں دیر نہیں لگے گی۔ سماء

BUS

life

reckless driving

sakina

Tabool ads will show in this div