مولانا فضل الرحمان کی حکومت کو نئی آفر

Nov 30, -0001

اسلام آباد: سینیٹ چیئرمین کے انتخاب کیلئے سیاسی جوڑ توڑ کا سلسلہ ایک بار پھر دلچسپ صورت حال اختیار کرگیا ہے ۔۔ چیئرمین اور ڈپٹی چیئرمین سینیٹ کے انتخاب کے لئے نون لیگ اور پیپلزپارٹی کو واضح اکثریت نہ مل سکی۔

جمعیت علمائے اسلام نے بھی پی پی کے اجلاس میں شرکت نہ کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

بڑے عہدوں کیلئے چھوٹی جماعتیں اہمیت اختیار کرگئیں۔ سینیٹ کا چیئرمین اور ڈپٹی چیئرمین کون بنے گا۔ ملین ڈالر کا سوال بن گیا۔

مفاہمت کے بادشاہ نے جےیوآئی کو ساتھ ملانے کی کوشش کی۔ ڈپٹی چیئرمین کی پیشکش کی۔

سیاسی جماعتوں کےاجلاس میں شرکت کی دعوت بھی دی لیکن جےیوآئی کی قیادت نے ٹھینگا دکھا دیا۔

خبریں یہ بھی ہیں کہ مولانا نے حکومت کو اہم وزارت کے عوض ڈپٹی چیئرمین کے عہدے سے دستبرداری کا پیغام بھیجا ہے۔

حکومت کو تو سینیٹ کے دونوں عہدوں کی اتنی فکر ہے کہ مخالف جماعتوں ایم کیو ایم اور اے این پی سے بھی رابطے کرلئے۔ سماء

 

Tabool ads will show in this div