سینیٹ کمیٹی کا بھی مردم شماری کے اعداد و شمار پر تحفظات کا اظہار

Aug 29, 2017

[video width="640" height="360" mp4="https://i.samaa.tv/wp-content/uploads/sites/11//usr/nfs/sestore3/samaa/vodstore/urdu-digital-library/2016/08/Statistics-Committee-2400-Isb-Pkg-29-08.mp4"][/video]

اسلام آباد : سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے نجکاری اور شماریات نے بھی مردم شماری کے نتائج پر تحفظات کا اظہار کردیا، ملک کے 1600 بلاکس میں دوبارہ سروے کی سفارش کردی، معاملہ مشترکہ مفادات کونسل میں اُٹھانے کی تجویز بھی دے دی۔

قائمہ کمیٹی برائے نجکاری اور شماریات کا اجلاس ہوا، کمیٹی ارکان نے مردم شماری کے نتائج پر تحفظات کا اظہار کردیا، ادارہ شماریات کے حکام کمیٹی کو مطمئن کرنے میں ناکام رہے، تحریک انصاف نے 1600 بلاکس میں دوبارہ سروے کی سفارش کردی۔

سلیم مانڈوی والا نے بتایا مردم شماری عملے نے ان سے اور ان کی اہلیہ سے معلومات نہیں لیں، چیئرمین کمیٹی نے لقمہ دیا مردم شماری کا عملہ ہمارے گھر نوکر سے معلومات لے کر چلا گیا۔

کنسلٹنٹ مردم شماری آصف باجوہ نے بتایا 65 لاکھ افراد کے ڈیٹا کی نادرا سے تصدیق کرائی گئی، صرف 20 فیصد افراد کے ڈیٹا کی جانچ پڑتال کی گئی، نادرا کے پاس 7 کروڑ افراد کا ڈیٹا موجود ہی نہیں۔ وہ کراچی کے مردم شماری نتائج کے حوالے سے تحفظات کا جواب دینے سے گریزاں نظر آئے۔

آصف باجوہ نے بتایا مردم شماری پر 17 ارب روپے سے زائد اخراجات آئے، پاک فوج کو سیکیورٹی کیلئے 6 ارب روپے دیئے، کراچی شہر کی آبادی 1 کروڑ 49 لاکھ جبکہ کراچی ڈویژن کی آبادی 1 کروڑ 60 لاکھ ہے، کراچی میں ملیر سمیت بہت سے علاقے اب بھی رورل ہیں، لاہور کے پورے ضلع کو 2 سال قبل اربن قرار دیدیا گیا تھا، جس کے باعث شہر کی آبادی میں زیادہ اضافہ ہوا۔ سماء

PTI

PBS

Tabool ads will show in this div