پاکستان پر 11 ارب ڈالر جرمانے کا خدشہ

[video width="640" height="360" mp4="https://i.samaa.tv/wp-content/uploads/sites/11//usr/nfs/sestore3/samaa/vodstore/urdu-digital-library/2016/08/Rekodik-Project-File-24-08.mp4"][/video]

اسلام آباد : عالمی بينک کے ٹربيونل ميں ریکوڈک کيس ميں شکست نظر آرہی ہے، مخالف فيصلہ آنے پر پاکستان کو 11 ارب ڈالر تک جرمانہ ہوسکتا ہے، وزيراعظم نے سينيٹ ميں ان کيمرہ بريفنگ کے دوران خوفناک انکشاف کردیا۔

عالمی بينک ٹربيونل ميں ریکوڈک کيس کی سماعت ہورہی ہے، وزیراعظم شاہد خاقان عباسی نے سینیٹ میں ان کیمرہ بریفنگ کے دوران سنسنی خیز انکشاف کیا ہے کہ کيس ميں شکست دکھائی دے رہی ہے، مخالف فيصلہ آنے پر پاکستان پر 11 ارب ڈالر تک جرمانہ ہوسکتا ہے۔

وزیراعظم کا کہنا ہے کہ حکومت نے اقوام متحدہ اور دوبارہ سپریم کورٹ جانے پر بھی غور شروع کردیا ہے۔

واضح رہے کہ سپریم کورٹ نے 2013ء میں ریکوڈک معاہدہ کالعدم قرار دے دیا تھا جبکہ بلوچستان حکومت نے غیر ملکی کمپنی کو ریکوڈک پروجیکٹ میں مائننگ کا لائسنس دینے سے انکار کردیا تھا، جس پر ٹیتھیان کاپر کمپنی نے پاکستان کیخلاف عالمی عدالت انصاف میں ہرجانے کا دعویٰ دائر کیا تھا۔ سماء

Mining

International Court of Justice

Gold and Copper

Tethyan Copper Company Pty Ltd

TCC

Reko Diq Project

Chagai district

Tabool ads will show in this div