زین قتل کیس میں اہم پیشرفت، مصطفیٰ کانجو نے فائرنگ کا اعتراف کرلیا

اسٹاف رپورٹ

لاہور : سابق وزير صديق کانجو کے بيٹے مصطفیٰ کانجو نے زين قتل کيس ميں فائرنگ کرنے کا اعتراف کرليا، ملزم کا کہنا ہے کہ اس نے صرف ہوائی فائرنگ کی، زين کو نشانہ بنانا اس کا مقصد نہيں تھا۔

زين قتل کيس ميں اہم پيشرفت ہوئی ہے، مرکزی ملزم مصطفیٰ کانجو نے فائرنگ کرنے کا اقرار کرليا۔

مصطفیٰ کانجو نے پوليس حراست ميں بيان ديا ہے کہ وقوعہ کے وقت اس نے فائرنگ کی تھی ليکن اس کا ٹارگٹ زين نہيں تھا، مرکزی ملزم کا کہنا ہے کہ فائرنگ کے وقت وہ اپنے ہوش و حواس ميں تھا۔

پوليس نے زين کے قتل ميں استعمال ہونے والی کلاشنکوف بھی برآمد کرلی ہے جس پر مصطفیٰ کانجو کی انگليوں کے نشان موجود ہيں۔

اس سے قبل مصطفیٰ کانجو کو 4 ساتھيوں سميت انسداد دہشت گردی کی عدالت ميں پيش کيا گيا تو ملزم نے فائرنگ کا الزام قبول کرنے سے انکار کيا تھا۔

عدالت نے ملزمان کو 8 روزہ جسمانی ريمانڈ پورا ہونے پر 10 اپريل کو انسداد دہشت گردی کی عدالت ميں دوبارہ پيش کيا جائے گا۔ سماء

premier

فائرنگ

کیس

paper

uzbekistan

Tabool ads will show in this div